: تازہ ترین

تازہ ترین ویڈیو

سندھ حکومت کا صوبے میں ٹڈی دل کے خاتمے کیلیے عید کے روز بھی کئی علاقوں میں اسپرے جاری


locusts May 26, 2020 | 9:40 PM

کراچی:(نیوزآن لائن) سندھ حکومت کی جانب سے صوبے میں ٹڈی دل کے خاتمے کیلیے عید کے روز بھی کئی علاقوں میں اسپرے کیا گیا.وزیرزراعت سندھ محمد اسماعیل راہو نے اپنے جاری کردہ بیان میں مزید کہاہے کہ سندھ کے دو نہیں بلکہ 9 اضلاع ٹڈی دل سے متاثر ہوئے ہیں, عید کہ دوسرے دن بھی محکمہ زراعت کی ٹیموں نے مختلف اضلاع میں ٹڈی دل کے خاتمے کیلیے خیرپور, سانگھڑ, شہید بینظیر آباد, کشمور کند ھکوٹ, دادو, قمبرشھدادکوٹ, مٹیاری, جامشورو, حیدرآباد, تھرپارکر اور بدین میں 1408 ایکڑ اسپرے کیا گیا. انہوں نے کہا کہ وفاق کی طرف سے سندھ میں ابھی تک کوئی فضائی اسپرے شروع نہیں کیا گیا, موسم گرما کی فصلوں میں ٹڈی دل کے حملوں سے 451 ارب کا نقصان ہونے کا خدشہ ہے, ٹڈی دل سے انسانوں کو کوئی خطرہ نہیں فصلیں تباھ کردیتی ہے, اس وقت بڑی تعداد میں ٹڈی دل بلوچستان سے سندھ اور جنوبی پنجاب میں داخل ہورہی ہے. اسماعیل راہو نے وفاق پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ٹڈی دل اتنا بڑا قومی مسئلہ ہے ابھی تک وفاق کی عدم توجہ کا شکار ہے, کاش وزیراعظم صاحب نتھیا گلی گھومنے کے بجائ جہاز حادثہ، کورونا اور ٹڈی دل کے مسائل پر تھوڑا غور کر لیتے, موجودہ حکومت کی نااہلی کی وجہ سے ٹڈی دل سے ملک ایک نئے بحران کا شکار ہوگا.صوبائی وزیر نے کہا کہ زراعت تباہ ہوئی تو قحط اور غذائی قلت جیسے بڑے مسائل سر اٹھائینگے,عوام نے نتھیا گلی گھومنے کے بجائے، کورونااورٹڈی جیسی مصیبتوں کاسامناکیا,ٹڈی دل کوئی بیماری نہیں پھیلاتی اورنہ ہی جانوروں پرحملے کرتی ہے یہ صرف فصلوں پر حملہ کرتی ہے, ٹڈی دل سندھ میں صوبے کی سالیانی 70 فیصد بجٹ جتنا فصلوں کو نقصان پہنچا سکتی ہے. اسماعیل راہو نے کہا کہ ٹڈی دل سندھ کی ریگستا نی 7 اضلاع سمیت 10 اضلاع میں فصلیں مکمل تباہ کرسکتی ہے.

محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن سندھ نے اپریل تک 64418.812 ملین روپے ٹیکس وصول کیا۔


excise and taxation government of sindh May 15, 2020 | 11:10 PM

لاک ڈان کی وجہ سے ٹیکسز کی وصولی میں کمی کا سامنا رہا۔ مکیش کمار چالہ
کراچی۔ :( نیوزآن لائن) محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات سندھ نے رواں مالی سال میں جولائی 2019 سے اپریل 2020 تک مجموعی طور 64418.812 ملین روپے ٹیکس وصول کیا گیا جبکہ گزشتہ مالی سال میں اسی مدت تک کے لئے 60547.924 ملین روپے ٹیکس وصول کیا گیا تھا۔ تفصیلات کے مطابق موٹر وہیکل ٹیکس کی مد میں 5337.790 ملین روپے، انفراسٹرکچر سیس کی مد میں 52411.278 ملین روپے اور پروفیشنل ٹیکس کی مد میں 487.165 ملین روپے وصول کئے گئے۔کاٹن فیس کی مد میں 203.200 ملین روپے، جائیداد ٹیکس کی مد میں 1822.619 ملین روپے ، انٹرٹینمنٹ ڈیوٹی کی مد میں 59.977 ملین روپے اور باقی رقم دیگر ٹیکسز کی مد میں وصول کی گئی۔ دریں اثنا صوبائی وزیر برائے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات اور پارلیمانی امور مکیش کمار چالہ نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ لاک ڈان کے باعث ٹیکسز کی وصولی میں کمی کا سامنا ہے اور محکمہ ایکسائز سندھ نے ٹیکس جمع کروانے والوں کی سہولت کے لئے آن لائن مینجمنٹ سسٹم متعارف کروا دیا۔ مکیش کمار چالہ نے مزید کہا کہ آن لائن مینجمنٹ سسٹم کورونا وائرس سے تحفظ فراہم کرنے کے لئے متعارف کروایا گیا ہے۔اس سسٹم کے تحت گاڑی کی رجسٹریشن، ٹرانسفر اور دیگر ٹیکسز جمع کراوئے جاسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ ایکسائز سندھ کے دفاتر میں کورونا وائرس سے بچا کے لئے حکومت سندھ کی جاری کردہ ہیلتھ ایڈوائزری پر سختی سے عمل ہورہا ہے،اس کے علاوہ صوبائی وزیر مکیش کمار چالہ نے کہا کہ ٹیکس جمع کروانے کے خواہشمند فوری طور پر آن لائن مینجمنٹ سسٹم سے فائدہ اٹھائیں۔

موجودہ صورتحال میں ہوٹلز/ریسٹورنٹز کھولنے کا خطرہ مول نہیں لے سکتے۔ جام اکرام اللہ دھاریجو


hotel and resturnt close in karachi May 15, 2020 | 11:07 PM

کراچی:(نیوزآن لائن)صوبائی وزیر برائے صنعت وتجارت اور محکمہ امداد باہمی و انسداد بدعنوانی جام اکرام اللہ دھاریجو نے کہا ہے کہ یہ بات باعث تشویش ہے کہ کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی لوکل ٹرانسمیشن کی تعداد میں خطرناک حد تک اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے اور موجودہ صورتحال کے پیشِ نظر ہوٹلز/ ریسٹورنٹز کھولنے کا خطرہ مول نہیں لے سکتے۔ یہ بات آج انہوں نے کورونا وائرس کی صورتحال پر نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشنز کے تحت ہونے والے وڈیو لنک اجلاس میں حصہ لیتے ہوئے کہی۔ وفاقی وزیر برائے صنعت وتجارت حماد اظہر نے اجلاس کی صدارت کی۔سندھ کے وزیر برائے صنعت وتجارت جام اکرام اللہ دھاریجو کی صوبہ سندھ کی نمائندگی کی ۔ اجلاس میں سیکریٹری صنعت وتجارت سندھ عبدالغنی سہتو نے بھی شرکت کی۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر برائے صنعت وتجارت جام اکرام اللہ دھاریجو نے مزید کہا کہ شاپنگ مالز ایس او پیز کے مطابق کھلنے چاہیں۔ ہمیں کورونا وائرس کی وبا کو پھیلنے سے روکنے کے لئے بہت احتیاط سے کام لینا ہوگا۔ انہوں نے مزید کہا کہ موجودہ صورتحال میں ہوٹلز کھولنے کا خطرہ مول نہیں لے سکتے جبکہ ایس او پیز کے تحت آٹو موبائل انڈسٹری کھولی جاسکتی ہے۔ صوبائی وزیر جام اکرام اللہ دھاریجو نے کہا کہ ضرورت اس امر کی ہے کہ انسانی جانوں کو اولیت دیتے ہوئے روزگار کے مواقع مہیا کئے جائیں۔ کورونا وائرس کے باعث طرز زندگی میں تبدیلی لانے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت سندھ ہر سطح پر عوام کی بہتری کے لئے وفاقی حکومت سے تعاون کررہی ہے۔ کورونا وائرس کو مل کر ہی شکست دے سکتے ہیں۔ صوبائی وزیر صنعت وتجارت نے کہا کہ حکومت سندھ نے ایس او پیز کے تحت مخصوص صنعتوں کو کھولنے اور کاروبار چلانے کی اجازت دی ہے۔ اگر
ایس او پیز پر عمل نہیں کیا جائے گا تو عمل نہ کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ جام اکرام اللہ دھاریجو نے کہا کہ کاروباری طبقے کو چاہیے کہ وہ خود بھی ایس او پیز پر عمل کریں اور اپنے عملے اور گاہکوں کو بھی ایس او پیز پر عمل کروائیں۔

لرننگ ریسورس نیٹ ورک کو انٹرنیشنل ٹریڈ برائے انٹرپرائز کے لئے ملکہ کے ایوارڈ سے نوازا گیا


lrn news May 7, 2020 | 11:16 PM

اس ایوارڈ کا حصول ان سب لوگوں کی محنت ، لگن اور وفاداری کی علامت ہے
جنہوں نے پچھلے تین سالوں میں ہماری تنظیم کے ساتھ کام کیا ہے،محمد زوہیب طارق
کراچی:(نیوزآن لائن)برطانیہ میں لرننگ ریسورس نیٹ ورک کو انٹرنیشنل ٹریڈ برائے انٹرپرائز کے لئے ملکہ کے ایوارڈ سے نوازا گیا ہے۔ ایل آر این برطانیہ میں 220 تنظیموں میں سے ایک ہے جو اس وقار کی پذیرائی کے ساتھ پہچانی جاتی ہے۔ایل آر این کے سی ای اومحمد زوہیب طارق جوپاکستانی نژاد برطانوی ہیں نے کہاکہ ایل آر این ، اس کے عملہ اور اسٹیک ہولڈرز کے لئے یہ ایک اور قابل فخر لمحہ ہے۔ اس ایوارڈ کا حصول ان سب لوگوں کی محنت ، لگن اور وفاداری کی علامت ہے جنہوں نے پچھلے تین سالوں میں ہماری تنظیم کے ساتھ کام کیا ہے۔2011 میں شروع کیا گیا ، ایل آر این ایک اعزاز بخش ادارہ ہے جو ان کی پیشہ ورانہ یا ذاتی ترقی کے لئے انگریزی زبان کی مہارت کا ٹھوس ثبوت رکھنے کے خواہشمند افراد کے لئے انگریزی زبان کی قابلیت فراہم کرتا ہے۔ یہ بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ قابلیت تعلیمی اداروں ، پیشہ ورانہ اداروں اور حکومتوں کو درکار مہارت اور صلاحیتوں کا ثبوت فراہم کرتی ہے۔ایل آر این کے اجرا پر ، بانیوں نے تجربہ اور اعلی ماہرین تعلیم اور صنعت کے پیشہ ور افراد کی مہارت سے تجربہ ، توثیق ، تشخیص کی دولت پرمبنی سیکھنے کامرکزبنانے کامطالبہ کیا۔انگلینڈ میں قابلیت ، امتحانات اور تشخیص کے لئے ریگولیٹر – ایل آر این آفوکل کے ذریعہ ایک انعام دینے والی تنظیم کے طور پر پہچانا جاتا ہے۔ایل آر این موسم گرما میں ملکہ کے ایوارڈ جیتنے والوں کے شاہی استقبالیہ کے دوران اپنے ایوارڈ کو منانے کی طرف دیکھ رہا ہے۔

سندھ حکومت کا منافع خوروں کے خلاف سخت کریک ڈاؤن کا فیصلہ


sindh information  logo April 26, 2020 | 5:31 PM

منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف دفعہ 2008 سیکشن 7 اے کے تحت کارروائی ہوگی.اسماعیل راہو
صوبے کے تمام ڈپٹی کمشنرز، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنرز، اسسٹنٹ کمشنرز اور مختیارکارز بطور پرائز میجسٹریٹس اپنے فرائض انجام دینگے, اسماعیل راہو
کراچی :( نیوزآن لائن) سندھ حکومت نے منافع خوروں کے خلاف سخت کریک ڈاؤن کا فیصلہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف دفعہ 2008 سیکشن 7 اے کے تحت کارروائی ہوگی. وزیرزراعت محمد اسماعیل راہو نے مزید کہا ہے کہ صوبے میں تمام ذمہ دار افسران کومنافع خوروں اورذخیرہ اندوز ی کرنے والوں کے خلاف فوری کارروائی کا حکم جاری کردیا گیا ہے, صوبے کے تمام ڈپٹی کمشنرز، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنرز، اسسٹنٹ کمشنرز اور مختیارکارز بطور پرائز میجسٹریٹس اپنے فرائض انجام دینگے,تمام پرائز میجسٹریٹس کو ناجائز قیمتیں وصول کرنے والوں کے خلاف چھاپے مارنے کے اختیار ہونگے, صوبے بھر میں سپلائی پرائسزکے افسران تمام پرائزمیجسٹریٹ کے ساتھ کارروائی کریں گے. صوبائی وزیر نے کہا کہ صوبے میں پرائز بیورو کے 119 انسپیکٹرز کی ڈیوٹی لگائی ہے, کراچی میں 28 سپلائی بیورو کے افسران پرائس میجسٹریٹس کے ساتھ منافع خوروں کے خلاف کارروائی کریں گے, صوبے بھر میں ضلعی سطح پر مانیٹرنگ روم قائم کردیے گئے ہیں. انہوں نے کہا کہ ماہ رمضان کے پہلے دن ہی منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف شکایتیں موصول ہوئی ہیں, اگر کسی دکاندار,فروٹ یا سبزی والے کے پاس پرائز لسٹ نہیں ہوگی تو اسکے خلاف کارروائی ہوگی۔

دکانیں / بازار مرحلہ وار کھولے جاسکتے ہیں۔ جام اکرام اللہ دھاریجو


markts will open in differnet shifts April 19, 2020 | 8:30 PM

کراچی:(نیوزآن لائن) سندھ کے وزیر برائے انسداد بدعنوانی ، صنعت و تجارت اور محکمہ باہمی امداد جام اکرام اللہ دھاریجو نے کہا ہے کہ حکومت سندھ کاروباری سرگرمیوں کے خلاف نہیں ہے ، ہم کاروباری سرگرمیاں دوبارہ شروع کرنے میں دلچسپی رکھتے ہیں لیکن خدشہ ہے کہ بے احتیاطی کے باعث کورونا وائرس پھیل سکتا ہے ، یہی وجہ ہے کہ حکومت سندھ صورتحال سے نمٹنے کے لئے بہت احتیاط سے کام لے رہی ہے۔ یہ بات انہوں نے آج یہاں الیکٹرانک چینلز سے گفتگو کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت سندھ کو مزدور اور غریب طبقے کو درپیش مسائل سے پوری طرح آگاہی ہے ، لیکن ان کی صحت اور زندگی کسی بھی چیز سے زیادہ اہم ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم ایس او پیز کے تحت دکانیں کھولنے کی کوشش کر رہے ہیں اور ان کے لئے مناسب شیڈول جاری کیا جائے گا۔ جام اکرام اللہ دھاریجو نے کہا کہ ہمارے پاس کورونا وائرس کے مریضوں کی جانچ کرنے کے لئے ٹیسٹنگ کٹس کی کمی کا سامنا ہے۔ ہم اس صلاحیت کو بڑھا رہے ہیں اور کورونا وائرس سے اپنے آپ کو بچانے کے لئے سماجی دوری کے سوا اور کوئی راستہ نہیں ہے۔ صوبائی وزیر برائے انسداد بدعنوانی، صنعت وتجارت اور امداد باہمی جام اکرام اللہ دھاریجو نے کہا کہ بدقسمتی سے وفاقی حکومت نے کورونا وائرس کے معاملے پر حکومت سندھ کے ساتھ مربوط تعاون نہیں کیا اور جب تک کہ تمام صوبے اور وفاقی حکومت ایک جیسی پالیسی لاک ڈان کی پالیسی پر عمل نہیں کریں گے اس کے مطلوبہ نتائج نہیں مل سکے۔ انہوں نے کہا کہ ہم ایک مشکل وقت سے گزر رہے ہیں اور کورونا وائرس کے خلاف ہمیں مل کر کام کرنا ہوگا اور متفقہ پالیسیاں اپنانا پڑیں گی۔ جب تک ہم ایسا نہیں کریں گے کامیابی حاصل نہیں کرسکتے۔

ایک شہر سے دوسرے شہر اور دیگرصوبوں کو ٹیکسی میں مسافر لے جانے والے ڈرائیورز کے خلاف کارروائی کے جائے. اویس قادرشاہ


taxi April 12, 2020 | 9:38 PM

سندھ سے پنجاب, کے پی اور بلوچستان ٹیکسیوں میں 4 سے زائدافراد سفرکررہے ہیں,کورونا وائرس پھیل سکتا ہے, اویس قادرشاہ
محکمہ کے افسران اور پولیس ڈرائیورز کے خلاف کارروا ئی کرکے گاڑی تھانے میں بند کریں. اویس قادرشاہ
شہری ایس ایچ او سے اجازت لیکرایمرجنسی کے طورپرٹیکسی استعمال کر سکتے ہیں, اویس قادرشاہ
کراچی:(نیوزآن لائن) سندھ حکومت نے لاک ڈاؤن کے دوران ٹیکسی میں سفر کرنے والوں کے لئے متعلقہ ایس ایچ او کا اجازت نامہ لازمی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ایک شہر سے دوسرے شہر اور سندھ سے دیگرصوبوں کو ٹیکسی میں مسافر لے جانے والے ڈرائیورز کے خلاف کارروائی کے جائے. وزیرٹرانسپور ٹ سندھ سید اویس قادرشاہ نے مزید ہدایتیں جاری کرتے ہوئے کہا کہ سندھ سے پنجاب, کے پی اور بلوچستان ٹیکسیوں میں 4 سے زائدافراد سفرکررہے ہیں, محکمہ کے افسران اور پولیس ڈرائیورز کے خلاف کارروائی کرکے گاڑی تھانے میں بند کریں. صوبائی وزیر نے کہا کہ ایک شہر سے دوسرے شہر کسی کو جانا ہوگا تو وہ متعلقہ تھانے کے ایس ایچ او سے اجازت نامہ لیکر جائے گا,شہری ایس ایچ او سے اجازت لیکرایمرجنسی کے طورپرٹیکسی استعمال کر سکتے ہیں, ٹیکسی میں ایمر جنسی کے طور پر ڈرائیور کے ساتھ ایک شہری کو سفر کرنے کی اجازت ہے, ٹیکسی میں سفر کرنے والے افراد ایس ایچ او کا اجازت نامہ ساتھ رکھیں, جن کے پاس اجازت نامہ نہیں ہوگا اس کی گاڑی تھانے میں بند کردی جائے. اویس شاہ نے کہا کہ ٹیکسی میں دیگر صوبوں کو جانے پر بھی پابندی ہے, خلاف ورزی کرنے پرکارروائی ہوگی, ٹرانسپورٹ پر مکمل پابندی ہے شہری بلاوجہ سفر نہ کریں. انہوں نے کہا کہ لاک ڈاؤن میں بلاوجہ کسی کو بھی سفر کرنے کی اجازت نہیں ہے, گاڑی میں زیادہ افراد کے سفر کرنے سے کورونا وائرس پھیل سکتا ہے.

وزیر اعظم عمران خان نے تعمیراتی صنعت کے لئے ایک جامع امدادی (پیکیج) کا اعلان کیا ہے لیکن دو اہم ترین صنعتوں جس میں سیمنٹ ساور لوہے کی صنعت کو یکسر طور پر نظر انداز کر دیاگیا ہے ۔ آل آئرن اسٹیل مرچنٹس ایسوسی ایشن رجسٹرڈ کے صدر حماد پو نا والا


iron steel merchant April 5, 2020 | 4:40 PM

وزیر اعظم عمران خان نے تعمیراتی صنعت کے لئے ایک جامع امدادی (پیکیج) کا اعلان کیا ہے جس میں جہاں ایک طرف کنسٹرکشن کو صنعت کا درجہ دینے، فکسڈ ٹیکس کا نفاز اور ریئل اسٹیٹ ٹرسٹ کے قیام جیسے دوررس فیصلے کئے گئے ہیں وہیں کنسٹرکشن کی صنعت سے متعلقہ دو اہم ترین صنعتوںجس میں سیمنٹ ساور لوہے کی صنعت کو یکسر طور پر نظر انداز کر دیاگیا ہے
کراچی: (نیوزآن لائن )آل آئرن اسٹیل مرچنٹس ایسوسی ایشن رجسٹرڈ کے صدر حماد پو نا والا نے اپنا مؤقف بیان کرتے ہوئے کہاکہ بروزجمعرات،٣ مارچ کو وزیر اعظم عمران خان نے تعمیراتی صنعت کے لئے ایک جامع امدادی (پیکیج) کا اعلان کیا ہے جس میں جہاں ایک طرف کنسٹرکشن کو صنعت کا درجہ دینے،فکسڈ ٹیکس کا نفاز اور ریئل اسٹیٹ ٹرسٹ کے قیام جیسے دوررس فیصلے کئے گئے ہیں وہیں کنسٹرکشن کی صنعت سے متعلقہ دو اہم ترین صنعتوںجس میں سیمنٹ اور لوہے کی صنعت کو یکسر طور پر نظر انداز کر دیاگیا ہے۔ ہم آل آئرن اینڈ اسٹیل مرچنٹس ایسوسی ایشن جو کہ لوہے کے تاجروں اور درآمد کنندگان کی ایک نمائندہ تنظیم ہے اس انتہائی اہم امر کی طرف وزیراعظم صاحب کی توجہ مبذول کروانا چاہتے ہیں۔ پاکستان صنعتی خام مال کا ایک نیٹ امپوررٹر ملک ہے۔ یعنی پاکستان کی لوہے کی کھپت اسکی کل پیداوار سے بہت کم ہے چنانچہ یہ کمی درآمد شدہ صنعتی خام مال سے پوری کی جاتی ہے۔ ان میں چادر سے لیکر سریے تک کی ہر طرح کی مصنوعات شامل ہیں۔ یہ تمام مصنوعات تعمیراتی سرگرمیوں کی ترقی میں بنیادی کردار ادا کرتی ہیں۔ لوہے کی صنعت کو نظر انداز کرنے سے یقینی طور پر اس پیکج سے مطلوبہ نتائج حاصل کرنامشکل ہوں گے۔گزشتہ سالوں میں ان مصنوعات کی درآمد کو روکنے اور مقامی پیداوار کے ذریعہ خود انحصاری کو فروغ دینے کے لئے مختلف ٹیکس رائج کئے گئے اور درآمدات کی حوصلہ شکنی کی گئی۔ تاہم ،ہم نے دیکھا ہے کہ مقامی صنعتیں اس صنعتی خام مال کی بڑھتی ہوئی مانگ سے نمٹنے سے قاصر ہیں۔ جس کے نتیجے میں ان مصنوعات کی درآمد میں ناگزیر اضافہ ہوا ہے۔ اقتصادی سست روی اور روپے کی گرتی ہوئی قدرکے پیش نظر موجودہ صورت حال میں ان مصنوعات کے درآمدات کنندگان کے لئے مارکیٹ میں متوازن قیمت کو برقرار رکھنا ناممکنات میں سے ہے۔جس کا براہ راست اثر ان کے صارفین پر پڑتا ہے اور مہنگائی میں اضافے کا باعث بنتا ہے۔چونکہ یہ درآمدات ناگزیر ہیں اور بہت سے لوگ ان بڑے اور چھوٹے پیمانے کی صنعتوں سے وابستہ ہیں چنانچہ نہ صرف ان مصنوعات پر عائد ٹیکسوں پر نظر ثانی وقت کی اشد ضرورت ہے بلکہ اس پیکیج سے مطلوبہ نتائج حاصل کرنے کے لئے ناگزیر ہے۔ہم وزیراعظم صاحب سے یہ درخواست کرتے ہیں کہ مذکورہ بالا وجوہات کے پیش نظر لوہے کی صنعت کو پیکیج کا حصہ بناتے ہوئے ان مصنوعات پر عائد ٹیکسوں میں فِل فور کمی کی جائے۔ لوہے کی چادر اور ا سٹرکچرل اسٹیل پر ریگولیٹری ڈیوٹی کی شرح 5 تا 30فیصد تک ہے اور سیلز ٹیکس کی شرح17 فیصد ہے۔ چونکہ یہ درآمدی اشیاء عیش و آرام کی زمرہ میں نہیں آتیں بلکہ ان کی بہت سی صنعتوں کو خام مال کی صورت میں ضرورت رہتی ہے،چنانچہ ہماری تجویز یہ ہے کہ اس پیکج سے مطلوبہ نتائج حاصل کرنے کے لئے موجودہ ریگولیٹری ڈیوٹی کی شرح کونصف تک کیا جائے یا سرے سے ختم کر دیا جائے اور سیلز ٹیکس کوواپس 12فیصد کیا جائے۔ یہاں غور طلب بات یہ بھی ہے کہ پاکستان اسٹیل مل کی بندش کے باوجود ہاٹ رولڈ اسٹیل جو کہ لوہے کی انتہاء خام شکل ہے پہ ٢١ عاشالیہ ٥ فیصد ریگولیٹوری ڈیوٹی وصول کی جا رہی ہے جبکہ پاکستان میں کوء اور ادارہ یہ خام مال بنانے کی اہلیت اب تک نہیں رکھتا۔ ان ٹیکسوں کی کمی کے نتیجے میں نہ صرف معاشی سرگرمیاں بڑہیں گی بلکہ کارخانوں کے چلنے سے روزگار میں اضافہ ہوگا۔ بظاہر تو پر ٹن ٹیکس میں کمی ہو گی مگر معاشی سرگرمیوں کے بڑھنے سے مجموعی ٹیکس میں اضافہ ہوگا جو کسی بھی صحتمند معیشت کی بنیاد ہوتی ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ وزیراعظم صاحب ہماری تجاویز پر غور کرتے ہوئے ضروری اقدامات اٹھایں گے اور لوہے کی کرب سے گزرتی صنعت کو سہارا دینے میں مددگار ثابت ہونگے۔ ہم وزیراعظم کے معیشت کو سہارا دینے کے اس بروقت اقدام کو تہہ دل سے سراہتے ہوئے اپنے مکمل تعاون کی یقین دہانی کرواتے ہیں۔

بین الاقوامی فلائیٹس آپریشن کی دوبارہ منسوخی ایک اچھا قدم ہے۔ سید ناصر حسین شاہ


internationals fligts suspend March 29, 2020 | 8:31 PM

کراچی: (نیوزآن لائن)سندھ کے وزیر اطلاعات ، بلدیات، جنگلات وجنگلی حیات سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ ملک میں بین الاقوامی فلائیٹس آپریشن کی دوبارہ منسوخی ایک اچھا قدم ہے۔صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ صوبائی حکومتیں تاریخ کے مشکل ترین حالات میں مشکل ترین تاریخی فیصلے کر رہی ہے۔لہٰذا اس قسم کا کوئی بھی فیصلہ کرنے سے پہلے صوبائی حکومتوں کو اعتماد میں لیا جانا انتہائی ضروری ہے۔انہوں نے اس امید کا اظہار کیا کہ آئندہ فلائٹ آپریشن کی بحالی یا اس قسم کا کوئی بھی دوسرا فیصلہ جس سے صوبے متاثر ہوسکتے ہوں لینے سے پہلے وفاقی حکومت صوبائی حکومتوں سے مکمل مشاورت کرے گی۔اس سے پہلے جب وفاقی حکومت نے 5 اپریل سے بین الاقوامی فلائٹس کی بحالی کا فیصلہ کیا تھا۔تو صوبائی وزیر اطلاعات سید ناصر حسین شاہ نے اپنے ٹوئٹ میں بین الاقوامی فلائٹس آپریشن کی بحالی کے وفاقی حکومت کے فیصلے کو انتہائی غیر دانشمندانہ قرار دیا تھا۔سید ناصر حسین شاہ کا کہنا تھا کہ فلائٹس آپریشن کی بندش کا فیصلہ پہلے ہی بہت تاخیر سے کیا گیا تھا۔اب اس کی بحالی مسائل کوجنم دے گی۔انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومتوں کو کورونا وائرس کے خلاف ایک مشکل جنگ لڑنا پڑ رہی ہے۔ایسا کوئی بھی فیصلہ ان کی مشاورت کے بغیر نہیں کیا جانا چاہیے ۔صوبائی وزیر اطلاعات سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ چونکہ کورونا وائرس کا پھیلاؤ پورے ملک میں ہو رہا ہے لہٰذا ہمیں صحت کے معاملے میں احتیاط برتنے سے متعلق ایک مشترکہ ہدایت نامہ جاری کرنا چاہیے۔صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے حوالے سے وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو یکساں ہدایات جاری کرنی چاہئیں۔تمام حکومتوں کو مل کر فیصلے کرنے چاہئیں۔ سید ناصر حسین شاہ نے کاکہنا تھا کہ اکٹھے ہم نہ صرف کورونا وائرس کے پھیلاؤکے خلاف بہت مؤثر اقدامات اٹھاسکتے ہیں۔بلکہ اس طرح سے لئے گئے فیصلے زیادہ اثر انگیز ثابت ہوں گے اور لوگ اس پر عمل بھی کریں گے ۔
دریں اثناء سید ناصر حسین شاہ نے کورونا وائرس کے حوالے سے بنائی گئی ٹاسک فورس کی 32 ویں میٹنگ کے فیصلوں کے بارے میں آگاہی دیتے ہوئے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ نے میٹنگ کے دوران یہ ہدایات جاری کی ہیں کے سب سے پہلے روزانہ اجرت پر کام کرنے والے لوگوں کے خاندانوں تک راشن اور نقد رقم پہچانے کا فوری بندوبست کیا جائے۔صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ حکومت سندھ ایک ایسا طریقہ کار وضع کر رہی ہے جس کے ذریعے با آسانی ان لوگوں کے خاندان تک پہنچاجاسکے جو کہ روزانہ اجرت پر کام کرتے تھے۔انہوں نے بتایا کہ اس سلسلے میں حکومت نے ایک ‘ ریلیف انشیئٹو ایپ ‘ بھی بنالی گئی ہے جس کے ذریعے روزانہ اجرت پر کام کرنے والے لوگوں کو شناختی کارڈ کے نمبروں کے ذریعے رجسٹرڈ کرنے کی بھی تجویز دی گئی ہے۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ حکومت سندھ اور وزیر اعلیٰ کی ہر طرح سے یہ کوشش ہے کہ کسی طرح اصل حقدار خاندانوں کی مدد کی جائے اور وقت پر کی جائے۔صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ ہم اس مشکل گھڑی میں اپنے لوگوں کو بھی تنہا نہیں چھوڑیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں ہم نے تمام شراکتداروں جن میں کہ فلاحی اداروں کے لوگ بھی شامل ہیں سے مکمل طور پر رابطے میں ہیں۔
سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ تمام فلاحی ادارے جن میں کہ سیلانی ویلفیئر آرگنائزیشن ، ایدھی ، چھیپا اور دیگر ادارے شامل ہیں۔سندھ حکومت کے ساتھ مکمل تعاون کررہے ہیںاور انہوں نے ٹاسک فورس کی میٹنگ کے دوران وزیراعلیٰ سندھ کو تفصیلاََ آگاہی بھی دی کہ وہ اب تک کتنے گھرانوں میں مفت راشن تقسیم کر چکے ہیں۔سید ناصرحسین شاہ نے کہا کہ چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کی یہ واضح ہدایات ہیں کہ کوئی ایک بھی مستحق امداد سے محروم نہیں رہنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ مستحقین کے معاملے میں کوئی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی ۔حکومت سندھ کی جانب سے لئے گئے سخت فیصلوں کا حوالہ دیتے ہوئے سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ کہ سندھ حکومت نے جو بھی سخت فیصلے کئے ہیں وہ عوام کی جانوں کے تحفظ کے لئے کئے ہیں۔سید ناصرحسین شاہ نے کہا کہ مساجد میں باجماعت نماز کی پابندی ایک انتہائی تکلیف دہ فیصلہ تھا مگر اب اس کے علاوہ حکومت کے پاس کوئی اور چارہ نہیں بچا تھا ۔صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ نماز باجماعت اور نماز جمعہ کے اجتماع پر پابندی لگانے سے پہلے تمام علماء کرام کو اعتماد میں لیا گیا تھا بلکہ ان سے اس بارے میں تفصیلی مشاورت کی گئی تھی ان کی رضا مندی کے بعد یہ فیصلہ کیا گیا۔سید ناصر حسین شاہ نے اس کٹھن وقت میں حکومت کا ساتھ دینے پر تمام علماء کرا م کا شکریہ بھی ادا کیا۔انہوں نے کہا کہ یہ مشکل وقت ہے مشکل فیصلے کرنے پڑیں گے۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ لاک ڈاؤن کے حوالے سے اعلان کردہ نئے اوقات کار پر بھی سختی سے عمل کروایا جارہا ہے۔انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ روزانہ کی بنیاد پر ٹاسک فورس کی میٹنگ کی صدارت کرتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ نے پہلے ہی احکامات جاری کر رکھے ہیں کہ لوگ بلاوجہ اپنے گھروں سے باہر نہ نکلیںاور اس سلسلے میں قانون نافذکرنے والے اداروں کو واضح ہدایت جاری کی جا چکی ہے۔سید ناصر حسین شاہ نے یہ بھی بتایا کہ لاک ڈاؤن کے پہلے دن سے تمام ضروری سروس سے منسلک افراد کو استشنیٰ قراردیا جا چکا ہے تاکہ کھانے پینے کے علاوہ دیگر ضروری اشیاء جن میں پانی اور اجناس کی دیگر اشیاء شامل ہیں کی سپلائی میں کوئی رکاوٹ پید انہ ہو۔صوبائی وزیر اطلاعات نے بتایا کہ حکومت سندھ نے پاکستان آرمی کی مدد سے تقریباََ صوبے کے تمام اضلاع میںقرنطینہ قائم کردیئے ہیں جس میں کراچی ایکسپو سینٹر میں ہزار بیڈ سے زیادہ کی گنجائش والا ہسپتال بھی شامل ہے۔

وفاقی حکومت بجٹ خسارہ پورا کرنے کے لیے مختصر مدتی قرضوں کو ترجیح دیتی ہے، : اسٹیٹ بینک


state bank of pakistan March 15, 2020 | 9:01 PM

اسلام آباد:(نیوزآن لائن) اسٹیٹ بینک آف پاکستان کا کہنا ہے کہ وفاقی حکومت بجٹ خسارہ پورا کرنے کے لیے مختصر مدتی قرضوں کو ترجیح دیتی ہے۔ مرکزی بینک کے اس دعوے نے مانیٹری پالیسی کمیٹی کے ان اعدادوشمار کی صحت پر سوالیہ نشان ثبت کردیا ہے جن کا استعمال کمیٹی ملک کی مانیٹری پالیسی تشکیل دینے کے لیے کرتی ہے۔گذشتہ مانیٹری پالیسی کمیٹی کے اجلاس کے منٹس کے مطابق وزارت خزانہ مختصر مدتی قرضوں پر دل چسپی ظاہر کررہی ہے اور ایک سالہ مارکیٹ ٹریژری بلز کے ثمرات کو روک کر رکھنا چاہتی ہے۔ مارکیٹ ٹریژری بلز ( ایم ٹی بی) اور پاکستان انویسٹمنٹ بانڈز ( پی آئی بی) وہ آلات( انسٹرومنٹس) ہیں جن کے ذریعے وفاقی حکومت بجٹ فنانسنگ کے لیے تجارتی بینکوں سے رقم حاصل کرتی ہے۔

حکومت سندھ تعلیم کے فروغ کے لئے ہر سطح پر تعاون کررہی ہے۔ جام اکرام اللہ دھاریجو


education March 1, 2020 | 8:32 PM

کراچی:(نیوزآن لائن) صوبائی وزیر برائے صنعت و تجارت اور امداد باہمی و انسداد بدعنوانی جام اکرام اللہ دھاریجو نے کہا کہ ملک و قوم کی ترقی میں تعلیم انتہائی اہم کردار ادا کرتی ہے جبکہ طلبا کی کردار سازی میں اساتذہ، والدین اور ادارے نہایت اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ جن قوموں کو اچھے اور قابل اساتذہ میسر آتے ہیں وہ انتہائی خوش نصیب ہوتی ہیں۔ یہ بات آج انہوں نے کیڈیٹ کالج گھوٹکی میں چوتھے تقریب یوم والدین کے انعقاد کے موقع پر بحیثیت مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے کہی۔ تقریب میں طلبا کے والدین، سیاسی وسماجی شخصیات کے علاوہ سول و فوجی افسران بھی بڑی تعداد میں موجود تھے۔
صوبائی وزیر جام اکرام اللہ دھاریجو نے کیڈٹ کالج کے طلبا کی پریڈ کا بھی معائنہ کیا۔ تقریب میں پریڈ، پی ٹی شو، جمناسٹک اور دیگر جسمانی کرتبوں کا مظاہرہ کیا گیا۔ تقریب میں چاروں صوبوں کی ثقافت کو بھی شاندار انداز سے اجاگر کیا گیا۔ پروگرام میں بورڈ اور کالج میں نمایاں پوزیشن اور بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے کیڈٹ اور اساتذہ و دیگر عملے میں یادگاری شیلڈز اور تعریفی اسناد بھی تقسیم کی گئیں۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر برائے صنعت و تجارت اور امداد باہمی و انسداد بدعنوانی جام اکرام اللہ دھاریجو نے کیڈٹ کالج کے پرنسپل ، اساتذہ کرام، ملازمین اور مستقبل کے معمار کیڈٹس کو چوتھے یوم والدین کے پرمسرت موقع پر مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ آج کا دن ایک یادگار اور سنہری دن ہے۔ دس سال کے قلیل عرصے میں اس کالج کی کارکردگی قابل تعریف اور پرنسپل اساتذہ کی محنت کا نتیجہ ہے۔ جام اکرام اللہ دھاریجو نے مزید کہا کہ اساتذہ اور تمام عملہ مبارکباد کا مستحق ہے۔ اس ادارے نے اپنی ذمہ داری کا بھرپور مظاہرہ کرتے ہوئے علمی میدان میں خدمات تسلسل کے ساتھ جاری رکھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ بات قابل فخر ہے کہ یہ ادارہ چند بہترین اداروں کی صف اول میں ہے۔ جام اکرام اللہ دھاریجونے کہا کہ مجھے امید ہے کہ یہ مستقبل کے معمار اپنی فیلڈز میں بہت اہم کردار ادا کرینگے۔ سندہ حکومت کالج کی مزید ترقی اور ترقیاتی کاموں کے لیئے اپنا بھرپور کردار ادا کرتی رہے گی۔صوبائی وزیر جام اکرام اللہ دھاریجو نے کہا کہ سندھ حکومت صوبے میں تعلیم کے فروغ کے لئے عملی طور پر کام کر رہی ہے اور ہم ہر سطح پر تعلیم کے فروغ کیلئے تعاون کے لئے تیار ہیں۔

دنیا میں سات ملین (یعنی ستر لاکھ )سے زائد افراد فضائی آلودگی کے باعث قبل ازوقت لقمہ اجل بن جاتے ہیں ،ماہرین صحت


karachi planting campain March 1, 2020 | 8:04 PM

کراچی:(نیوزآن لائن)پاکستان کی ایک ہزار پچاس کلومیٹر طویل ساحلی پٹی میں ہر سال سمندر لگ بھگ پچاس ہزار ایکڑ زمین نگل رہا ہیس خطے میں موسمیاتی تبدیلیوں کے نتیجے میں بڑھتے ہوئے درجہ حرارت کے سبب سمندری سطح میں ایک اعشاریہ ایک ملی میٹر سالانہ کا اضافہ ہورہا ہے۔ پاکستان دنیا کے ان دس ممالک کی فہرست میں شامل ہے جنہیں موسمیاتی تبدیلیوں سے سب سے زیادہ خطرہ ہے سمندری جنگلات موسمیاتی تبدیلیوں پر مثبت اثرات مرتب کرتے ہیں یہ باتیں پاکستان بھر سے ماہرین امراض سینہ نے کراچی کے مضافات میں ٹرٹل بیچ کے قریب ڈبلیو ڈبلیو ایف کی آب گاہ (ویٹ لینڈ) پر شجرکاری کے بعد شرکا سے بات چیت کرتے ہوئے کہی ان ماہرین میں پا کستان چیسٹ سوسائٹی (پی سی ایس) کے صدر اور اوجھا انسٹی ٹیوٹ آف چیسٹ ڈیزیز کے سربراہ ڈاکٹر نثار احمد راؤ ڈاکٹر نوشین سیف جنرل سیکریٹری (پی سی ایس) ڈاکٹر مرزا سیف اللہ بیگ ٹریژر، ڈاکٹر نغمان بشیر اور بریگیڈئر جمال احمد(اسلام اباد) ڈاکٹر عبدالجبار اچکزئی ڈاکٹر مقبول (کوئٹہ بلوچستان) ڈاکٹر ملک حفیظ الرحمان (جہلم) پروفیسر خالد وحید (لاہور) پروفیسر سعدیہ اشرف( پشا ور) پروفیسر علی زبیری (آغاخان یونیورسٹی) ڈاکٹر ندیم احمد ڈاکٹر شاہینہ قیوم ڈاکٹر سید ظفریاب حسین ڈاکٹر شکیل صدیقی اوردیگربھی شامل تھے۔ ان ماہرین نے کہاکہ شجر کاری کے ذریعے گلوبل وارمنگ کو کم کیاجاسکتاہے پاکستان میں سرکاری سطح پر بھی یہ مہم کلین اینڈ گرین پاکستان کے نام سے چلائی جارہی ہے چند درخت لگا کر یقینا ماحول کی بہتری ممکن نہیں مگر اس طرح کے اقدامات سے لوگوں میں شجرکاری اور ماحول کو بہتر بنانے کا شعور پید ا ہوتاہے ان ماہرین نے کہاکہ دنیا میں سات ملین (یعنی ستر لاکھ )سے زائد افراد فضائی آلودگی کے باعث قبل ازوقت لقمہ اجل بن جاتے ہیں ماحول کو صاف بناکر ہم اس طرح موت کے شکار ہونے والے اکثر افراد کو بچا سکتے ہیں اسی لیے چیسٹ کون ٠٢٠٢ کا آغاز شجر کاری سے کیا جارہاہے تاکہ ماحول کو بہتر بنانے کی اخلاقی اور سماجی ذمیداری کو پورا کیا جائے۔
انہوں نے کہاکہ سینے کے امراض کی بنیادی وجوہات کو کم کرنے کیلیے شہری صنعتی،سمندری اور مجموعی فضائی آلودگی پر قابو پانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کہاکہ پاکستان میں صنعتی وٹریفک کی آلودگی کے ساتھ شعور کی کمی کے نتیجے میں بھی آلودگی بڑھ رہی ہر سال اسموگ کے نتیجے میں جانیں خطرے میں پڑجاتی ہیں پروفیسر نثار احمد راؤ نے اس موقع پر بتایاکہ پاکستان چیسٹ سوسائٹی کی ہردوسال کے بعد ایک بین الاقوامی کانفرنس ہوتی ہے جو اس سال چیسٹ کون ٠٢٠٢ کے نام سے مارچ کے آخری ہفتے میں منعقد ہورہی ہے اس کانفرنس کا آغاز (سوفٹ لانچنگ)ہم نے صحت مند پھیپھڑے صحت مند زندگی کے نعرے کے ساتھ شجرکاری مہم سے کردیا ہے کانفرنس میں امراض سینہ کے فزیشن اور سرجن شریک ہوں گے جس میں چودہ ورکشاپس اور پندرہ غیرملکی ماہرین اس کانفرنس کیسائنٹفک سیشنز سے خطا ب کریں گے انہوں نے بتایاکہ چھبیس مارچ کو ورکشاپس جبکہ ستائیس اٹھائیس انتیس مارچ کو تین روز سائنٹفک سیشنز ہوں گے جس میں پاکستان بھر سے سینے کے امراض کے ڈاکٹرز شریک ہوں گے اور ماہرین کے لیکچرز کے ذریعے پاکستان اور دنیا بھر میں سینے کے امراض کے حوالے سے جدید تحقیق سے استفادہ کرسکیں گے۔قبل ازیں شرکا نے جن میں بچے بھی شامل،علیحدہ علیحدہ مینگرووز کیدرخت لگائے۔

تیسری پاکستان ہیلتھ کئیر سمٹ 2020منگل کو ہوگی


consumers association of pakistan February 23, 2020 | 7:34 PM

کراچی:(نیوزآن لائن) کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان کے زیراہتمام,سندھ ہیلتھ کیئر کمیشن کے اشتراک سے تیسری پاکستان ہیلتھ کئیر سمٹ منگل 25فروری کو مقامی ہوٹل میں منعقد ہوگی، کنزیومر ایسوسی ایشن کے چیئر مین کوکب اقبال کے مطابق کانفرنس کے دو سیشن ہونگے، ابتدائی سیشن کی مہمان خصوصی صوبائی وزیر برائیویمن ڈیولپمینٹ سیدہ شہلا رضا ہوں گی ان کے علاوہ وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی سینیٹر راشدربانی سابق سیکرٹری صحت ڈاکٹر فضل اللہ پیچوہو  ڈاکٹر منہاج اے قدوائی سی ای او سندھ ہیلتھ کیئر کمیشن، ابرارالدین, ڈاکٹر سیدعمران علی شاہ سیکریٹری ہیلتھ، ڈاکٹر سیمی جمالی ایگزیکٹو ڈائریکٹر جناح پوسٹ گریجویٹ میڈیکل سنٹر، معید الحسن، ڈاکٹر قیصر سجاد  سیکریٹری جنرل پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن، نجم الثاقب ایڈیشنل ڈائریکٹر ڈرگ ریگیولیٹری اتھارٹی پاکستان، عتیق الرحمن ڈائریکٹر جنرل پاکستان نیشنل ایکریڈیٹیشن کونسل، پروفیسر شبیب الحسن وائس چانسلر ہمدرد یونیورسٹی، پروفیسر پیرزادہ قاسم رضا صدیقی وائس چانسلر ضیاء الدین یونیورسٹی، بریگیڈیر ڈاکٹر ملک وقار احمد اعوان سی ای او میمن میڈیکل انسٹی ٹیوٹ اور سمیر میر شیخ چیئرمین اسٹینڈنگ کمیٹی ایجوکیشن سائنس اینڈ ٹیکنالوجی اورفیڈریشن آف پاکستان چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریز  بھی خطاب کریں گے۔ جبکہ ٹیکنیکل سیشن سے ملک میں صحت عامہ کے شعبے سیمتعلق ماہرین خطاب کریں گے، جن میں ڈاکٹر خالد شفیع ایسوسی ایٹ پروفیسر پیڈیاٹرکس ڈاؤ یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز، ڈاکٹر عذرا احسان کنسلٹنٹ گائناکولوجی اینڈ اوبسٹٹریشن او ایم آئی اسپتال،ڈاکٹر شہزاد حسین قریشی جنرل سیکریٹری پاکستان فارماسسٹ ایسوسی ایشن شامل ہیں، جبکہ بعد ازاں پینل ڈسکشن بھی ہوگا، اور حاضرین کے سوالوں کے جوابات بھی دیئے جائیں گے۔

حکمہ لائیوآسٹاک اینڈ فشریز اور آسٹریج ایسوسی ایشن پاکستان کے اشتراک سے 19 فروری 2020 کو سیمینار کاانعقاد کیا جارہا ہے۔ عبدالباری پتافی۔


fishing in pakistan February 16, 2020 | 7:56 PM

کراچی:(نیوزآن لائن)محکمہ لائیوآسٹاک اینڈ فشریز اور آسٹریج ایسوسی ایشن پاکستان کے اشتراک سے 19 فروری 2020 کو سیمینار کا انعقاد کیا جارہا ہے جس میں شترمرغ فارمنگ سے وابستہ افراد شریک ہونگے۔ یہ بات انہوں نے اہنے جاری ایک بیان میں کہی۔ انہوں نے کہا کہ شترمرغ فارمنگ ایک منافع بخش کاروبار ہے جس میں سرمایہ کاری کے وافر مواقع موجود ہیں ضرورت اس امر کی ہے کہ عوام میں اس کی افادیت کے بارے میں آگاہی فراہم کی جائے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ حکومت سندھ نے شتر مرغ فارمنگ سے منسلک افراد کی حوصلہ افزائی کے لیے یہ قدم اٹھایا ہے اس ضمن میں نجی شعبے کو بھی آگے آکر حکومت کا بھرپور ساتھ دینا چاہے۔ واضح رہے کہ محکمہ لائیواسٹاک اینڈ فشریز کے زیر انتظام چلنے والا سندھ انسٹیٹوٹ آف اینیمل ھیلتھ کورنگی میں سیمینار کا انعقاد کیا جارہا ہے۔ سیمینار سیصوبائی وزیر لائیواسٹاک اینڈ فشریز عبدالباری پتافی، سیکریڑی لائیو اسٹاک اعجاز مہیسر، ڈاکٹر نزیر کلہوڑو اور صدر آسٹریج ایسوسی ایشن آف پاکستان بھی خطاب کرئے گے۔

کرونا وائرس خدشے کے پیش نظر چین سے سبزیاں آنا بند، چائنہ، ادرک اور لہسن کے دام مزید بڑھ گئے


garlic February 2, 2020 | 6:29 PM

لاہور:(نیوزآن لائن)کرونا وائرس خدشے کے پیش نظر چین سے سبزیاں آنا بند، چائنہ، ادرک اور لہسن کے دام مزید بڑھ گئے۔تفصیلا ت کے مطا بق کرونا وائرس سے سبز مصالحہ جات کی سپلائی بھی متاثر، چین سے سپلائی معطل ہونے پر چائنہ ادرک اور لہسن کی قیمتیں بڑھ گئیں، ادرک چائنہ کی قیمت 50 روپے اضافے سے 300 سے 350 روپے کلو ہو گئی۔ لہسن چائنہ 90 روپے مہنگا ہوا، قیمت 270 سے 360 روپے کلو تک جا پہنچی۔ مارکیٹ ذرائع کے مطابق چین سے ترسیل کم ہونے کی وجہ سے ان اشیا کی قیمتوں میں تیزی آئی۔مٹر 5 روپے اضافے سے 120روپے، آلو اور گاجر 6 روپے اضافے سے 34 روپے کلو ہو گئے۔ پیاز بدستور 44 روپے کلو میں فروخت ہوا۔ ٹماٹر کا زور ٹوٹنے لگا اور اصل قیمت کی طرف واپسی ہونے لگی۔ ٹماٹر کی قیمت ایک ہفتے میں 23 روپے کم ہوکر50 روپے کلو رہ گئی۔

امید ہے کہ معاشی طور پر اس سال معاملات ٹھیک ہو جائیں گے۔وفاقی وزیر ریونیو حماد اظہر


hamad azhar revenue January 12, 2020 | 7:00 PM

لاہور:(نیوزآن لائن)وفاقی وزیر ریونیو حماد اظہر نے کہا ہے کہ اب روپے کی قدر مستحکم ہو رہی ہے، امید ہے کہ معاشی طور پر اس سال معاملات ٹھیک ہو جائیں گے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاہور میں میڈیا سے گفتگو میں کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ بزنس مینوں کا اعتماد بڑھنے سے سرمایہ کاری میں 78 فیصد اضافہ ہوا، سرکلر ڈیٹ میں کافی کمی آئی جبکہ کرنٹ اکانٹ خسارہ کم ہوا ہے۔حماد اظہر نے کہا کہ سابق حکومت خسارہ چھوڑ کر گئی، ہم نے معیشت کو دیوالیہ ہونے سے بچایا۔ مہنگائی کی بنیادی وجہ روپے کی قدر میں پریشر تھا۔ سخت فیصلے نہ کرتے تو پاکستان خدانخواستہ دیوالیہ ہو جاتا۔

ْآئین پاکستان کے تحت بجلی کے شعبے کے وفاقی اداروں میں صوبوں کونمائندگی دی جائے۔ وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ


imtiaz ahmed shiekh December 22, 2019 | 5:37 PM

سندھ کے وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ کا وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان کو مراسلہ
کراچی :) نیوزآن لائن) سندھ کے وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ نے وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان کو گذشتہ روز لکھے گئے اپنے ایک مراسلے میں مطالبہ کیا ہے کہ بجلی کے شعبے میں موجود تمام وفاقی اداروں کے بورڈ آف ڈائریکٹرز ، بورڈ آف گورنرز یا مینجمنٹ کمیٹیوںمیں صوبوں کو نمائندگی دی جائے۔اپنے خط میں وزیر توانائی سندھ نے لکھا ہے کہ 18ویں ترمیم کے بعد آئین کے آرٹیکل 154(1) کو فیڈرل لیجسلیٹو لسٹ حصہ دوئم کی انٹڑی نمبر 4 کے ساتھ پڑھنے سے یہ واضح ہے کہ بجلی کے وفاقی اداروں کی پالیسی سازی، نگرانی اور کنٹرول کا اختیار مشترکہ مفادات کی کونسل کو حاصل ہے۔اور اسی طرح مشترکہ مفادات کی کونسل کویہ اختیار بھی حاصل ہے کہ وہ صوبائی حکومتوں کی سفارشات پر بجلی کے وفاقی اداروں کے بورڈ آف ڈائریکٹرز ، بورڈ آف گورنرز یا یا مینجمنٹ کمیٹیوںکے ارکان کی تقرری کر سکے ۔چنانچہ ضروری ہے کہ آئین پاکستان کی واضح شقوں کی روشنی میں بجلی کے وفاقی اداروں میں صوبائی حکومتوں کے نمائندوں کی تقرری کو یقینی بنایا جائے۔اپنے خط میں صوبائی وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ نے امید ظاہر کی ہے کہ اس سلسلے میں فوری کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

ٹیکس نادہندہ گان گاڑیوں کے خلاف روڈ چیکنگ مہم آج سے شروع کی جارہی ہے۔ مکیش کمار چاؤلہ


excise and taxation government of sindh December 22, 2019 | 5:18 PM

کراچی :( نیوزآن لائن)محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن سندھ کی صوبے بھر میں ٹیکس نادہندہ گان گاڑیوں کے خلاف کارروائی کل بروز پیر سے شروع کی جارہی ہے اور سلسلے میں صوبے بھر میں ایکسائز ٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں۔ اس بات کا فیصلہ صوبائی وزیر برائے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات اور پارلیمانی امور مکیش کمار چاؤلہ کی زیر صدارت ہونے والے ایک اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس میں سیکرٹری ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات عبد الحلیم شیخ، ڈائریکٹر جنرل ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات شعیب احمد صدیقی اور دیگر افسران نے بھی شرکت کی۔ اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے ڈائریکٹر جنرل شعیب احمد صدیقی نے بتایا کہ عوام کی آگہی کے بڑے پیمانے پر تشہیری مہم بھی شروع کی گئی ہے تاکہ وہ اپنے ٹیکسز بروقت جمع کروا سکیں اور روڈ چیکنگ مہم کے مہم کے دوران ٹیکس نادہندہ گان گاڑیوں کو موقع پر ہی ضبط کر لیا جائے گا اور بقایاجات معہ جرمانے کی ادائیگی کے بعد ہی گاڑیاں حوالے کی جائیں گی۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر برائے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات اور پارلیمانی امور مکیش کمار چاؤلہ نے ٹیکس نادہندہ گان گاڑیوں کے مالکان کو مشورہ دیا کہ وہ گاڑی خریدنے کے فوراً بعد گاڑی اپنے نام منتقل کروائیں کیونکہ اوپن لیٹر پر گاڑی چلانا جرم ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر گاڑی کسی جرم میں استمعال ہوئی تو اس وقت جس کے نام پر ہوگی اسے ہی قانونی طور پر اصل مالک سمجھا جائے گا جبکہ عوام کی سہولت کے لئے ٹیکس جمع کروانے کے لئے نیشنل بنک اف پاکستان کی 15 برانچیں موجود ہیں اور ان برانچیں کی تفصیلات محکمہ کی ویب سائٹ اور اخبارات میں شائع کی گئی ہیں۔ ڈائریکٹر جنرل ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات شعیب احمد صدیقی نے بتایا کہ نیشنل بنک کی برانچیں عوامی مرکز، کلفٹن، سائیٹ ایریا، ناظم آباد، شہباز بلڈنگ حیدرآباد، ملت روڈ، کورنگی انڈسٹریل ایریا، ایم اے جناح، ڈینسو ہال، فاطمہ جناح روڈ حیدرآباد، ڈی ایچ اے ، پی آئی ڈی سی، آئی آئی چندریگر روڈ، گلشن اور ہائی کورٹ شامل ہیں علاوہ ازیں عوام کسی دشواری کی صورت میں ڈائریکٹر کراچی 99203671, ڈائریکٹر میرپور خاص 0233ـ9290211, ڈائریکٹر سکھر 071ـ9310202, ڈپٹ ڈائریکٹر ایڈمن کراچی 021ـ99201410, ڈائریکٹر حیدرآباد 022ـ9200148, ڈائریکٹر شہید بے نظیر آباد 0244ـ9370178 اور ڈائریکٹر لاڑکانہ 074ـ9410751 پر رابط کرسکتے ہیں۔ صوبائی وزیر مکیش کمار چاؤلہ نے ٹیکس نادہندہ گان گاڑیوں کے مالکان کو ہدایت کی ہے کہ وہ کسی بھی ناخوشگوار صورتحال سے بچنے کے لئے 23 دسمبر سے قبل اپنے ٹیکسز جمع کروا دیں۔ انہوں نے افسران کو بھی ہدایت کی کہ وہ دوران روڈ چیکنگ مہم گاڑیوں کے مالکان سے مہذب رویہ اختیار کریں تاہم ٹیکسز کی وصولی میں تمام قانونی تقاضوں کو پورا کریں۔

لوٹ مار مقدمات اور بیروزگاری آپریشن کے خلاف تاجر آج پریس کلب پر دھرنا دیں گے۔ محمود حامد


all-pakistan-orgranization-of-small-traders-and-cottages December 9, 2019 | 2:37 AM

آپریشن سے کاروبار تباہ ہو گیا بجلی نے نرخوں میں اضافہ واپس لیا جائے۔ سید لیاقت علی
کراچی : (نیوزآن لائن) آل پاکستان آرگنائزیشن آف اسمال ٹریڈرز اینڈ کاٹیج انڈسٹریز کراچی کے صدر محمود حامد نے بجلی کی قیمتوں میں اضافے کو ملک کے عوام اور تاجروں پر ظلم قرار دیتے ہوئے اس کی فوری واپسی کا مطالبہ کیا ہے انہوں نے کہا کہ بجلی ، گیس اور پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں پہلے ہی بہت بڑھی ہوئی ہیں جس کی وجہ سے پیداواری لاگت بہت بڑھ گئی ۔ عوام کا جینا دو بھر ہو گیا ہے۔ جس کی وجہ سے ہماری برآمدات بھی متاثر ہو رہی ہیں ۔دوسری جانب حکومت نے کراچی میں تجاوزات کے نام پر آپریشن کر کے کاروبار اور کاروباری لوگوں کو تباہ کیا ہوا ہے۔ تاجروں کو گرفتار کیا جا رہا ہے اور بازاروں میں ٹھیلا لگا کر اپنے بچوں کی روزی کمانے والوں کو آپریشن کے نام پر لوٹا اور بے روز گار کر دیا گیا ہے۔ وہ آج ناظم آباد، نئی کراچی ، گولیمار ، لیاقت آباد کی مارکیٹوں کے دورے کے موقع پر تاجروں سے خطاب کر رہے تھے۔ اس موقع پر ان کے ہمراہ سینئر نائب صدر سید لیاقت علی، عثمان شریف ، بابر بنگش ، غلام محمد (گلو بھائی) بھی موجود تھے ۔اسمال ٹریڈرز کے صدر نے کہا کہ نئے بجٹ اور آئی ایم ایف کی پابندیوں کی وجہ سے جولائی 2019 ئ سے کاروبار جمود کا شکار ہے ۔ملک کے تاجر کاروباری مندی کے باعث اپنی جمع پونجی کھا رہے ہیں یا مقروض ہو گئے ہیں۔ حکومت اور تاجر معاہدے کے بعد کاروبار میں بہتری کی اُمید کی جا رہی تھی مگر اچانک کراچی کی مارکیٹوں میں آپریشن توڑ پھوڑ کر کے کاروبار کو مزید خراب کر دیا گیا ہے ۔ چھوٹے کاروباری فاقہ کشی کا شکار ہیں اور بلدیاتی اہلکار ان سے رشوتیں بھی وصول کرتے ہیں اور انہیں کاروبار کرنے نہیں دیتے ۔ رات کی تاریکی میں ان کا مال لوٹ لیا جاتا ہے پولیس ہراساں کر کے بھتے وصول کر رہی ہے یہ صورتحال ناقابلِ برداشت ہے ۔ سید لیاقت علی نے کہا کہ ظلم کی انتہاہو گئی ہے سب سے زیادہ ٹیکس دینے والے شہر اور ملک کی معاشی شہ رگ کے تاجروں کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک کیا جا رہا ہے ۔ جس کے خلاف 9دسمبر2019ئ کو کراچی کلب پر احتجاجی دھرنا دیں گے ۔ مطالبات تسلیم نہ کیے گئے تو پورے شہر میں احتجاجی تحریک چلائیں گے۔

کراچی بھی ملک کا شہر ہے ۔ افسران و ملازمین اضافی تنخواہوں سے محروم ہیں ۔ ۔ ایکشن کمیٹی آفیسرز پاکستان


fund December 9, 2019 | 1:52 AM

کے ایم سی کو کوارٹر رقوم برائے ترقیاتی فنڈز بھی بند کردیئے گئے ۔ کراچی دشمنی بند کی جائے ۔ ایکشن کمیٹی آفیسرز پاکستان
کے ایم سی کو ایک ارب اور کے ڈی اے کو پچاس کروڑ کی فوری گرانٹ سندھ حکومت جاری کرے۔ نبیلہ خانم
کے ایم سی کو ترقیاتی فنڈز کی رقوم جاری نہ کرنا کراچی کے عوام کو محروم اور احساس کمتری میں مبتلا کرنا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کراچی:(نیوزآن لائن)آفیسرز ایکشن کمیٹی کی چیئرپرسن نبیلہ خانم نے کہا ہے کہ کراچی بھی ملک کا شہر افسران و ملازمین اضافی تنخواہوں سے محروم ہیں ۔ کے ایم سی کو کوارٹر رقوم برائے ترقیاتی فنڈز بھی بند کردیئے گئے ۔ کراچی دشمنی بند کی جائیکے ایم سی کو کراچی میٹروپولیٹن کارپوریشن کی جگہ کنگلی میٹروپولیٹن کارپوریشن کردیا گیا ہے۔ کے ایم سی کو ایک ارب اور کے ڈی اے کو پچاس کروڑ کی فوری گرانٹ سندھ حکومت جاری کرے۔ کراچی کے دو مرکزی ادارے کنگلی ڈیولپمنٹ اتھارٹی اور کنگلی میونسپل کارپوریشن بن چکے ہیں ۔ ایکشن کمیٹی اس پر سخت تحظات کا اظہار کرتی ہے ۔ کے ایم سی اور کے ڈی اے اضافہ شدہ تنخواہیں دینے کی پوزیشن تک میں نہیں۔ مذید براں کے ایم سی کو ترقیاتی فنڈز کی رقوم جاری نہ کرنا کراچی کے عوام کو محروم اور احساس کمتری میں مبتلا کرنا ہے۔ جبکہ سندھ حکومت کے سیاسی عزائم اور تعصب کراچی کے افسران اور عوام میں احساس محرومی پیدا کر رہا ہے۔ وزیر اعظم اور وزیر اعلی سندھ خصوصی گرانٹ جاری کرائیں ۔

سندھ کے وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ کا وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان کو خط


petrolium November 3, 2019 | 6:06 PM

بجلی،گیس اور پیٹرولیم سیکٹر کے اداروں کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں آئین کے مطابق صوبوں کو نمائندگی دی جائے۔
آئین پاکستان کا آرٹیکل 154واضح کرتا ہے کہ فیڈرل لیجسولیٹو لسٹ حصہ دوئم کے اندراج نمبر 2, 3اور4 کے تحت آنے والے موضوعات کی پالیسیوں اور ضوابط کی تشکیل
مشترکہ مفادات کی کونسل کا اختیار ہے۔ صوبائی وزیر امتیاز احمد شیخ
کراچی:(نیوزآن لائن) سندھ کے وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ نے وفاقی حکومت سے بجلی،گیس اور پیٹرولیم شعبوں کے لئے پالیسیاں بنانے والے اداروں اداروںآئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی اوگرا،نیشنل ٹرانسمیشن اینڈ ڈسپیچ کمپنی لمیٹڈ,سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی-گارنٹی اور ڈسٹری بیوشن کمپنیز اور دیگر متعلقہ اداروں کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں صوبوں کے نمائندوں کو شامل کرنے کے لئے وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان کو خط لکھا ہے اور کہا ہے کہ آئین پاکستان کے آرٹیکل 154 واضح کرتا ھے کہ فیڈرل لیجسلیٹیو لسٹ حصہ دوئم کے اندراج نمبر 2 ,3 اور 4 کے تحت آنے والے موضوعات ( کی پالیسیوں اور ضوابط تشکیل دینا مشترکہ مفادات کی کونسل کا اختیار ہے۔اپنے خط میں وزیر توانائی سندھ امتیاز احمد شیخ نے اس امر پر تشویش کا اظہار کیا ہے کہ آئین کے مذکورہ آرٹیکل کی جانب سے دیئے گئے واضح اختیار کے باوجود نہ تو بجلی کے شعبے میں آنے والے اداروں،کمپنیوں اور انسٹیٹیوشنز میں اور نہ ہی اوگراکے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں صوبوں کی جانب سے مقرر یا نامزد کئے گئے نمائندے موجود ھیں اور نہ ھی یہ ادارے کسی بھی طور پر مشترکہ مفادات کی کونسل کی نگرانی اور کنٹرول میں ھیں۔چنانچہ وفاقی حکومت سے میری درخواست ھے کہ ان اداروں کو آئین کی روح کے مطابق مشترکہ مفادات کی کونسل کی نگرانی اور کنٹرول میں دیا جائے تاکہ مشترکہ مفادات کی کونسل ان اداروں کو ضوابط کے مطابق چلانے کے لئے پالیسی سازی کرسکے انہوں نے مزید کہا ھے کہ نیشنل ٹرانسمیشن اینڈ ڈسپیچ کمپنی لمیٹڈ، سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی- گارنٹی ، ڈسٹری بیوشن کمپنیز اور دیگر متعلقہ انسٹیٹیوشنز کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں صوبوں کو نمائندگی دی جائے اور اوگرا میں صوبوں کی نمائندگی یقینی بنانے کے لئے اوگرا آرڈیننس 2002 میں ضروری ترامیم کی جائیں۔

آئی ایم ایف کا مشن کل پاکستان پہنچے گا


imf and pakistan October 27, 2019 | 5:46 PM

اسلام آباد:(نیوزآن لائن)وزارت خزانہ نے بتایا ہے کہ آئی ایم ایف کا مشنکل پاکستان پہنچے گا جو پاکستان کی کارکرگی کا جائزہ لے گا اور مذاکرات کے بعد پاکستان کو قرض کی دوسری قسط فراہم کرے گا۔تفصیلات کے مطابق پاکستان اور آئی ایم ایف کا پروگرام سے متعلق پہلا جائزہ رواں ماہ کے اختتام سے شروع ہوگا، آئی ایم ایف مشن دورے کا آغاز 28 اکتوبر سے ہوگا جس کی سربراہی ارینستوراماریزیگو کریں گے۔مشیر برائے خزانہ اور چیئرمین ایف بی آر سے ملاقاتیں ہوں گی جس میں تاجروں کیلیے فکسڈ ٹیکس اسکیم پر بات چیت کا بھی امکان ہے۔ڈائریکٹرمڈل ایسٹ اورسینٹرل ایشیاڈپارٹمنٹ آئی ایم ایف کا کہنا ہے کہ میکرواکنامک استحکام کے لیے اسٹیٹ بینک جبکہ مالیاتی معاملات پر وزارت خزانہ نے متعدداقدامات کیے ہیں۔آئی ایم ایف نے حکومت کے اصلاحاتی پلان کو معاشی استحکام کیلئے بہترین قرار دے دیاجہاد اظہور کا مزید کہنا تھا کہ معاشی اصلاحاتی پروگرام شرح نمومیں اضافی کاباعث بنے گا۔

نسل نو کو حصول مہارت کے مواقع کسی صورت ضائع نہیں کرنے چاہئیں۔ پروفیسر ڈاکٹر زرین عباسی


6x8 Photo October 20, 2019 | 11:55 PM

ہمارا نوجوان نہ صرف بہتر مستقبل کا اہل ہے بلکہ دنیا کے کسی بھی ملک کے نمائندگان نسل نو سے ہر سطح پر مقابلہ کی پوری صلاحیت رکھتا ہے ۔ سید امتیاز علی شاہ
ورکشاپ کے شرکاء سے ڈاکٹر شجاع احمد مہیسر، پروفیسر ڈاکٹر شبیر میمن ، پروفیسر ڈاکٹر عنبرین خاصخیلی، شاہد امین ، ثاقب رضاء ، ریما سیال و دیگر کا خطاب ۔
کراچی :( نیوزآن لائن ) ملک کی ترقی کے لئے تعلیم ناگزیر ہے لیکن تربیت اس سے بھی زیادہ ضروری ہے۔ ہمارا نوجوان تعلیم سے بہرور ہے لیکن تربیت سے یکسر محروم ۔ آداب و اخلاق اور مختلف شعبوں سے متعلق ماہرین کے تجربات دکانوں سے نہیں خریدے جا سکتے یہ صرف اور صرف تربیتی عمل کے ذریعے ہی منتقل کئے جا سکتے ہیں ۔ یوتھ افیئرحکومت سندھ صوبہ کے نوجوانوں کو تربیت فراہم کرنے کے سلسلے میں اپنی ذمہ داریاں بطریق احسن نبھا رہا ہے۔ نسل نو کو حصول مہارت کے مواقع کسی صورت ضائع نہیں کرنے چاہئیں ۔ ان خیالات کا اظہار ڈین فیکلٹی آف سوشل سائنسز سندھ یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر زرین عباسی نے گذشتہ روز محکمہ کھیل و امور نوجوانان سندھ اور سینٹر فار ریسرچ اینڈ سوشل ڈولپمنٹ کے اشتراک سے یوتھ ٹیکنالوجی انٹر پرینیور ورکشاپ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر ڈائریکٹر پاکستان اسٹڈی سینٹر ڈاکٹر شجاع احمد مہیسر ، ٹرینر ثاقب رضا،کے شاہد امین ،ڈائریکٹر ایریا اسٹڈی سینٹر ، پروفیسر ڈاکٹر شبیر میمن،چیئر مین ماس کمیونیکشن ڈپارٹمنٹ ،پروفیسر ڈاکٹر عنبرین خاصخیلی،چیئر پرسن اکنامکس ڈپارٹمنٹ،معشوق علی خواجہ ،پروفیسر ڈاکٹر فرزانہ بلوچ،ڈاکٹر ذوالفقار قریشی،عشرت برفت،سرفراز بخش،جاوید لارک و دیگر نے بھی خطاب کیا ورکشاپ کی چیف آرگنائزر ریما سیال جبکہ آرگنائزنگ کمیٹی ارکان میں اسد وسیم،مشتاق احمد اور ایاز چنا شامل تھے ۔اس موقع پر صدر نشیں سیکریٹری اسپورٹس و یوتھ افیئرز سندھ سید امتیاز علی شاہ کا پیغام پڑھ کر سنایا گیا ۔انہوں نے کہا کہ ہمارا ڈپارٹمنٹ صوبہ بھر کے نوجوانوں کی ترقی کے لئے مکمل معاونت اور رہنمائی فراہم کر رہا ہے ۔ہماری کوشش ہے کہ صوبہ کا کوئی بھی نوجوان جو خدمت وطن کیلئے جذبہ رکھتا ہے اسے ہر طرح کا تعاون دیا جائے ۔سید امتیاز علی شاہ نے پیغام میں کہا کہ ہمارانوجوان نہ صرف بہتر مستقبل کی قیادت کا اہل ہے بلکہ وہ دنیا کے کسی بھی ملک کے نمائندگان نسل نو سے مقابلہ کی بھر پور صلاحیت رکھتا ہے ۔ضرورت اس امر کی ہے کہ اسے اعلیٰ تعلیم کے ساتھ ساتھ تربیت کے شاندار مواقع فراہم کئے جائیں، شاہد امین نے کہا کہ سندھ کی یوتھ پالیسی میں پروموشن آف انٹر پرینیور شپ اور سیلف ایمپلائمنٹ کو خصوصی اہمیت دی گئی ہے ۔سینٹر فار ریسرچ اینڈ سوشل ڈیولپمنٹ نے ان ہی نکات کو مد نظر رکھتے ہوئے محکمہ کھیل و امور نوجوانان کے باہمی اشتراک و تعاون سے اس طرح کی ورکشاپس کا اہتمام تعلیمی اداروں میں مسلسل جاری رکھا ہوا ہے ۔ ورکشاپ کے شرکاء کو بتایا گیا کہ ٹیکنالوجی بیسڈ نجی کمپنی کا آغاز کس طرح کیا جا سکتا ہے ، کاروباری منصوبے بنانے کا طریقہ کار کیا ہے ،چھوٹی سی فرم قائم کرنے کے لئے کیا اقدامات ناگزیر ہوتے ہیں،پراڈکٹ یا سروسز کو کس طرح منتخب اور مارکیٹ کیا جاسکتا ہے ،مارکیٹ کا تجزیہ کس طرح سے کیا جانا چاہیے ،جز وقتی ، کل وقتی چھوٹے عرصہ اور لمبے وقت کے لئے تجارتی حکمت عملی کس طرح وضع کی جانی چاہیے ،کارو بار میں کس طرح کے رسک آسکتے ہیں اور ان سے کس اندا ز میں نبر آزما ہونا ہے ،ملکی و گلوبل معاشی حالات کے مطابق مشکلات کا سامنا کرتے ہوئے فرم کو کس طرح چلانا ہے ،تادیر کاروبار جاری رکھنے کے لئے ٹیم بلڈنگ کے اقدامات کیا ہونے چاہئیں ،رقوم کا انتظام کہاں سے اور کس طرح کرنا ہوگا ، مالیاتی اقدامات کس طرح مرتب کرنے ہوں گے وغیرہ۔ تکمیل ورکشاپ کے بعد شریک طلباء و طالبات کو سرٹیفیکٹس اور مہمانان گرامی کو یادگاری شیلڈز پیش کی گئی ۔

الائیڈ بینک کو آئی ٹی ترسیلات زر کی سہولت فراہم کرنے کی اجازت


ABL (1) October 20, 2019 | 11:43 PM

بینک پاکستانی فری لانسرز کو ترسیل زر کی خدمات انٹرگیرو سے اشتراک کیساتھ فراہم کریگا
کراچی:(نیوزآن لائن) اسٹیٹ بینک نے آئی ٹی ترسیلات زر کی سہولت فراہم کرنے کیلیے الائیڈ بینک لمیٹڈ کو پہلی اجازت دیدی۔ تفصیلات کے مطابق اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے سویڈش کی فائنٹیک کمپنی کو پاکستان میں کاروباری سرگرمیوںکی اجازت دیدی ہے جس کے تحت پاکستانی فری لانسرز کو حقیقی وقت کی بنیاد پر ترسیلات وصول کرنے میں آسانی ہوگی۔ انٹرگیرو نے کیس لیس ڈیجیٹلائزڈ ادائیگیوں کیلیے ایک جامع منصوبہ تیار کیا ہے جس کا مقصد افراد اور کاروبار کو حقیقی وقت کی بنیاد پر بغیر کسی رکاوٹ کے لین دین کا اہل بناناہے۔ اگرچہ یہ اقدام ادائیگی کی دیگر مشکلات کو ختم کرتا ہے لیکن استعمال میں آسانی او ر لاگت سے مسابقت وہ دواہم فوائد ہیں جو ادائیگی کے حل کے نظارے کو تبدیل کردیں گے۔ ایس بی پی کے ذریعہ لائسنس الائیڈ بینک لمیٹڈ اے بی سیل کو دیا گیا ہے جو پاکستانی فری لانسرز کو ترسیل زرد کی خدمات اشتراک کیساتھ فراہم کرے گا انٹرگیرو انٹرنیشنل کے کنٹری منیجر محمد اویس خان نے کہا کہ یہ ترسیلات زرکا محفوظ ترین طریقہ ہے اور اس سے ترسیلات زر کی لاگت اور وقت کو کم کیا جاسکے گا۔ اس کے ذریعے پاکستانی ای کامرس اور آئی ٹی انڈسٹری کو فروغ حاصل ہوگا۔ انٹرگیرو پاکستانیوں سے باہر مقیم تیسری پارٹی کو پاکستان میں ہی ایک محفوظ آپشن دینا چاہتاہے جہاں ٹرانزیکشن کا تبادلہ تاخیر، مہنگا اور غیر محفوظ ہے کیونکہ فنڈز اور کھاتوںکو کبھی بھی بلاک کیا جاسکتا ہے جس سے وہ بے بس ہوجاتے ہیں۔ انہوںنے مزید کہا کہ ہم خدمات کے تمام چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کیلیے تیار ہیں۔

سپوا کا احتجاج و دھرنا بدھ کو ہوگا۔


Dharna October 13, 2019 | 7:54 PM

سندھ پروسیکیوشن ویلفیئر ایسوسی ایشن کی اپیل پر تمام ضلعی اٹارنیز و پروسیکیوٹرز سندھ ہائی کورٹ سے سی ایم ہائوس مارچ کرکے دھرنا دیں گے
سپوا کے مطالبات میں تھری بیسک سیلری نوٹیفکیشن کا اجرائ، ضلعی اٹارنیز و پراسیکیوٹرز کی نامکمل عمارتوں کی تعمیر، سروس اسٹرکچر، اسٹاف پروموشن و دیگر شامل ہیں
کراچی: (نیوزآن لائن) سندھ پروسیکیوشن ویلفیئر ایسوسی ایشن (سپوا) کے صدر اقبال احمد سولنگی کے اعلامیے کے مطابق توہین عدالت کیس میں عدالت عالیہ کے حکم کے مطابق اگر سندھ حکومت نوٹیفکیشن جمع نہیں کراتی تو ہائیکورٹ سے بدھ 16 اکتوبر کو دوپہر 12 بجے سی ایم ہائوس کی جانب سندھ کے تمام ضلعی اٹارنیز، پراسیکیوٹرز و سینٹرل اسٹاف کا اپنے حقوق کیلئے احتجاجی مارچ وسی ایم ہائوس پر دھرنا ہوگا۔ سپوا کے صدر کے مطابق پروسیکیوشن ڈیپارٹمنٹ و اٹارنیز کے مطالبات میں سندھ ہائی کورٹ کے 25 اگست 2018 کے فیصلے کے مطابق تھری بیسک سیلری کے نوٹیفکیشن کے اجراء کے علاوہ تمام ضلعی اٹارنیز، پروسیکیوٹرز کی نامکمل عمارات کی تعمیر، سروس اسٹرکچر و اسٹاف کا پروموشن جیسے مطالبات شامل ہیں جو کہ ایک عرصہ سے تمام تر سعی و جہد کے باوجود حل طلب ہیں۔ سپوا کے عہدیداران نے سندھ کے تمام ضلعی اٹارنیز، پروسیکیوٹرز و اسٹاف ممبران کو ہدایات کی ہے کہ وہ بدھ 16 اکتوبر کو ہائی کورٹ میں اپنی موجودگی یقینی بنائیں تاکہ کامیاب مارچ و دھرنا کے ذریعے اپنے جائز مطالبات کی تکمیل ممکن ہوسکے۔

سندھ میں کام کرنے والی تیل اور گیس کی کمپنیاں جن علاقوں سے تیل اور گیس نکال رہی ہیں ، امتیاز احمد شیخ


oil and gas September 29, 2019 | 2:46 PM

کارپوریٹ سوشل رسپانسیبلیٹی کے تحت وہاں کے مقامی لوگوں کو روزگار،تربیت اور اس علاقے کی ترقی کے لئے کئے گئے اقدامات کی تفصیلات پیش کریں۔وزیر توانائی سندھ امتیاز احمد شیخ کے احکامات۔
کراچی :( نیوزآن لائن)سندھ کے وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ نے صوبے کے مختلف اضلاع میں تیل اور گیس نکالنے والی کمپنیوں سے جن علاقوں سے یہ کمپنیاں تیل اور گیس نکال رھی ھیں ،کمپنیوں کی جانب سے ان علاقوں کی ترقی،وہاں کے لوگوں کی تعلیم و تربیت اور انہیں ملازمتوں کی فراھمی کی تفصیلات طلب کرلی ھیں اور پوچھا ھے کہ اس ضمن میں آئل اینڈ گیس کمپنیاں اپنی قانونی زمہ داریاں کس حد تک پوری کررھی ھیں۔ اس سلسلے میں وزیر توانائی سندھ نے محکمہ توانائی کے افسران کو ھدایات دی ھیں کہ صوبے میں تیل اور گیس نکالنے والی کمپنیوں کو حکومت کی جانب سے جاری کردہ پیٹرولیم کنسیشن ایگریمنٹ جو کہ ان کمپنیوں کے کام کرنے کے لئے لائسنس کا درجہ رکھتا ھے کے تحت ان علاقوں جہاں سے تیل اور گیس نکالا جارہا ھے وہاں کارپوریٹ سوشل رسپانسیبلیٹی کے قانون کی رو سے متعلقہ علاقے کی ترقی،وہاں کے مقامی لوگوں کو روزگار کی فراھمی اور وہاںتعلیم وتر بیت کے لئے اٹھائے گئے اقدامات کی تفصیلات طلب کی جائیں۔ انہوں نے ھدایات دیں کہ سندھ میں تیل اور گیس نکالنے والی تمام کمپنیوں کا اجلاس طلب کرکے ان سے اس سلسلے میں آئندہ اٹھائے جانے والے اقدامات کے بارے میں آگاھی بھی لی جائے۔انہوں نے کہا کہ حکومت کا فرض ھے کہ وہ صوبے میں کام کرنے والی کمپنیوں سے صوبے کے عوام کے لئے کئے جانے والے اقدامات کو یقینی بنانے کے لئے گہری نظر رکھے کیونکہ یہ ان کمپنیوں کی قانونی زمہ داری ہے۔

پاکستان نے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کی سفارشات پر عملدرآمد کے تحت نئی نیشنل رسک اسیسمنٹ رپورٹ تیارلرلی


fatf September 29, 2019 | 2:25 PM

اسلام آباد:(نیوزآن لائن)پاکستان نے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) کی سفارشات پر عملدرآمد کے تحت ٹیررازم اور ٹیرر فنانسنگ کے خطرات اور ان سے نمٹنے کے حوالے سے نئی نیشنل رسک اسیسمنٹ رپورٹ تیار کرکے فیٹف کو بھجوادی۔پاکستان اور فیٹف کے درمیان مذاکرات آٹھ اکتوبر سے پیرس میں شروع ہونگے اس سے قبل پاکستان کی ٹیکنیکل ٹیم چین اور ملائشیا جائیگی اور فیٹف میں پاکستان کی حمایت کے حصول کیلئے ان ممالک سے جامع تبادلہ خیال کریگی۔فیٹف ٹیم کیساتھ مذاکرات کرنیوالی ٹیم میں شامل وزارت خزانہ کے سینئر افسر نے ایکسپریسکو بتایا کہ پاکستان نے اقوام متحدہ کے ادارہ برائے ڈرگ اینڈ کرائمز(یو این او ڈی سی)کے تعاون سے نئی نیشنل رسک اسیسمنٹ سٹڈی مکمل کرلی ہے۔ نئی نیشنل رسک اسیسمنٹ سٹڈی میں منی لانڈرنگ و ٹیررازم فنانسنگ کی روک تھام کیلیے ریگولیٹری رجیم کو بھی مزید مضبوط و موثر بنایا گیا ہے اور قوانین کو سخت بنا کر سزائوں میں اضافہ کیا گیاہے۔

ٹیکسز کی وصولی کی صورتحال کو مزید بہتر کرنے کے لئے اقدامات کئے جائیں۔ مکیش کمار چاولہ


excise and taxation government of sindh September 22, 2019 | 6:26 PM

کراچی:(نیوزآن لائن) صوبائی وزیر برائے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات اور پارلیمانی امور مکیش کمار چاولہ کی صدارت میں صوبے بھر ٹیکس وصولی کی مجموعی صورتحال اور ٹیکس وصولی میں تیزی لانے کے لئے ایک اجلاس منعقد کیا گیا۔ اجلاس میں سیکریٹری ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات عبد الحلیم شیخ، ڈائریکٹر جنزلز شبیر احمد شیخ اور شعیب احمد صدیقی سمیت دیگر افسران نے بھی شرکت کی۔ اجلاس کو بریفننگ دیتے ہوئے ڈائریکٹر جنرل ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن شبیر احمد شیخ نے بتایا کہ محکمہ ایکسائز سندھ موٹر وہیکل ٹیکس، انفراسٹرکچر سیس، پروفیشنل ٹیکس، کاٹن فیس، پراپرٹی ٹیکس، انٹرٹینمنٹ ڈیوٹی وغیرہ کی مد میں ٹیکس وصول کرتا ہے اور رواں مالی سال کے دوران ماہ جولائی اور اگست میں مجموعی طور پر 12172.986 ملین روپے وصول کئے گئے ہیں۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر برائے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات اور پارلیمانی امور مکیش کمار چاولہ نے کہا کہ ٹیکسز کی وصولی میں محکمہ ایکسائز سندھ کی کارکردگی قابل ستائش رہی ہے اور گزشتہ مالی سال کے دوران بھی محکمے نے سو فیصد سے زائد ٹیکسز وصول کئے اور اس مرتبہ بھی یہ کوشش کی جائے کہ ہماری کارکردگی اور ٹیکسز کی وصولی گزشتہ سال سے بھی بہتر رہے۔ انہوں نے کہا کہ صوبے کی ترقی کا دارومدار ٹیکسز کی بروقت اور صحیح وصولی پر ہوتا ہے اور یہ افسران کی ذمداری ہے کہ وہ اپنے اہداف بروقت اور ایمانداری سے حاصل کریں۔ اس موقع پر ڈائریکٹر جنرل نارکوٹکس شعیب احمد صدیقی نے صوبائی وزیر برائے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات اور پارلیمانی امور مکیش کمار چاولہ کو محکمہ نارکوٹکس کو فعال بنانے سے متعلق اقدامات سے متعلق بریفننگ دی جس پر صوبائی وزیر مکیش کمار چاولہ نے اپنے اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اس شعبے کو مذید فعال بنانے پر زور دیا۔

حکومت ٹیکسوں کے معاملے پر کسی سے بھی سودے بازی نہیںکریگی۔مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ


hafeez shiekh September 15, 2019 | 9:02 PM

اسلام آباد:(نیوزآن لائن) مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ کا کہنا ہے کہ ملک کا امیر طبقہ ٹیکسز دینے میں بہت کمزور ہے لیکنحکومت ٹیکسوں کے معاملے پر کسی سے بھی سودے بازی نہیںکریگی۔اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران مشیر خزانہ نے کہا کہ، حکومت نے فوری طور پر معاشی اصلاحات کے ذریعے اقتصادی صورت حال کو بہتر کیا، حکومت کے اخراجات کم اور دفاع کا بجٹ منجمد کیا، کرنٹ اکاونٹ خسارے میں 73فی صد کمی کی گئی،را کام پاکستان کے عوام کے لئے ہے، پاکستان کے لئے ہم دنیا کی ہر طاقت کے سامنے کھڑے ہونے کے لئے تیار ہیں۔ ریونیو اکھٹا کرنے کی کوشش کررہے ہیں تاکہ بیرونی قرض نہ لینا پڑے، رواں سال جولائی اور اگست میں 580ارب ٹیکس جمع کیا گیا جب کہ گزشتہ مالی اسی دورانیے میں 509ارب روپے ٹیکس جمع کیا گیا تھا۔ پچھلے سال کے مقابلے میں جولائی میں ایکسپورٹ میں اضافہ اور امپورٹ میں کمی ہوئی ہے۔عبدالحفیظ شیخ کا کہنا تھا کہکستان میں ٹیکس فائلرز کی تعداد 25لاکھ ہوگئی ہے، ایف بی آر میں 6 لاکھ ٹیکس دہندگان کو رجسٹر کیا گیا اور اسے مزید بڑھایاجائیگا، ایسا پروگرام متعارف کرا رہے ہیں جس میں ایکسپورٹرز کو فوری ری فنڈ ملے گا،آئندہ سے ہر مہینے کی 16 تاریخ کو ٹیکس ریفنڈ ہوجایا کرے گا۔انہو ں نے مزید کہا کہ ایکس چینج ریٹ بہتر ہوا ہے جس کے باعث جون اورجولائی کے دوران روپے کی قدر بڑھی۔ روپے کی قدر اب مستحکم ہے،اسٹاک مارکیٹ بھی اب بہتر ہے۔ ملک میں اداروں کو بہتر انداز میں چلانے کی کوشش کررہے ہیں، شفاف انداز میں اداروں کی نجکاری چاہتے ہیں، پبلک سیکٹر میں نہ چل سکنے والے ادارے نجی شعبے کو دینے کا فیصلہ کیا ہے، اس سلسلے میں 10 نئی کمپنیوں کی نجکاری کے لیے اشتہار دے دیے گئے ہیں۔

معیشت میں استحکام لانا ہماری ترجیح ہے، سارے مسائل کا حل اسٹیٹ بینک کے پاس نہیں ہے۔ گورنر اسٹیٹ بینک


governer state bank of pakistan September 8, 2019 | 12:46 PM

لاہور:(نیوزآن لائن) اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے گورنر رضا باقر نے کہا ہے کہ معیشت میں استحکام لانا ہماری ترجیح ہے،سارے مسائل کا حل اسٹیٹ بینک کے پاس نہیں ہے۔ فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری(ایف پی سی سی آئی) ریجنل آفس لاہور میں ریجنل چیئرمین عبدالروف مختار کی سربراہی میں کاروباری برادری کے ساتھ ملاقات میں انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں نجی شعبہ کا کاروبار بڑھے،منافع بڑھے اور روزگار میں بھی اضافہ ہو۔ نجی شعبہ کو اصول وضوابط کے مطابق کام کرنا چاہیے۔ مقابلہ کے رجحان کو برقرار رکھنا ہماری ترجیح ہے، اس کے بغیر ترقی نہیں ہو سکتی۔افراط زرکو کنٹرول کرنا سٹیٹ بنک آف پاکستان کا کام ہے۔گورنر اسٹیٹ بینک نے کہا کہ ایکسچینج ریٹ کو مارکیٹ سسٹم میں لایا گیا ہے جو پہلے فکس تھا۔ ایکسچینج ریٹ کی پالیسی کو بناتے وقت سپلائی اور ڈیمانڈ کا خیال رکھا جاتا ہے۔گزشتہ سالوں میں جب بھی تجارتی خسارہ بڑھا۔انہوں نے کہا کہ کاروبار میں پائیدار گروتھ لانا ہماری ترجیح ہے۔6ماہ سے پہلے کی صورتحال سے اب حالات بہتر ہیں۔ ریفارمز لائے ہیں،آئی ایم ایف سے معاہدہ کیا ہے، آئی ایم ایف کی وجہ سے غلط چیزیں نہیں ہوتیں۔ سارے مسائل کا حل سٹیٹ بنک کے پاس نہیں ہے۔رضا باقر نے کہا کہ ایکسپورٹ اور ایس ایم ای سے متعلق پالیسی لا سکتے ہیں، کاروباری برادری کواگر بینکوں کی وجہ سے کوئی بھی دقت ہے، سٹیٹ بنک ان کو حل کرے گا۔

معیشت کے بہتری کیلئے جامع حکمت عملی تیار کی جا رہی ہے۔مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ


abdul hafeez sheikh August 25, 2019 | 5:48 PM

اسلام آباد:(نیوزآن لائن ) مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے کہا ہے کہ معیشت کے بہتری کیلئے جامع حکمت عملی تیار کی جا رہی ہے تاکہ عوام کی بہتری کے لئے اہم فیصلے کئے جا سکیں گئے۔اسلام آباد میں وزیراعظم عمران خان کے ساتھ معاشی ٹیم کی ملاقات کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس جامع حکمت عملی کے تحت معاشی ٹیم وزیراعظم کو ہفتہ وار بنیاد پر اہم فیصلوں سے آگاہ کرے گی۔عبدالحفیظ شیخ نے کہا کہ اس ملاقات کا مقصد معیشت کا جائزہ لینا اور ترقیاتی منصوبوں اور بجٹ میں مختص کی گئی رقم کے ذریعے عام آدمی تک اس کے ثمرات پہنچانے کیلئے منصوبہ وضع کرنا تھا۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نے ہدایت کی ہے کہ ثمرات کو معاشرے کی نچلی سطح تک منتقل کرنے کیلئے بڑے منصوبے جلد مکمل کئے جائیں۔عبدالحفیظ شیخ نے کہا کہ ملاقات میں یہ فیصلہ بھی کیا گیا کہ تاجربرادری کو بجلی کی فراہمی، گیس میں اعانت اور قرضے کی سہولت میں آسانی سے متعلق امور پر اعتماد میں لیا جائے۔

ٹیکس چوروں کا پاکستان میں اب کوئی مستقبل نہیں ہے،دانش عارف پٹیل


danish arif patel August 18, 2019 | 10:37 PM

آل پاکستان ٹمبر ٹریڈرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین شرجیل گوپلانی، صابر بنگش، عاطف شیخ، فاروق گھانچی، انصار بیگ قادری، احمد شمسی، زبیر علی خان اور دیگر موجو د تھے
کراچی (نیوزآن لائن) معروف چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ دانش عارف پٹیل نے کہا ہے کہ فنانس بل کے بعد تاجر برادری کی تمام لین دین پر فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کی نظر رہے گی، یکم جولائی کے بعد سے تمام چیزوں کی معلومات ایف بی آر کو ملنا شروع ہو گئی ہے، ٹیکس چوروں کا پاکستان میں اب کوئی مستقبل نہیں ہے،ا یف بی آر میں افسران کی اکھاڑ پچھاڑ کا سلسلہ جاری ہے ایف بی آر میں اصلاحات ہو رہی ہیں اس سے تاجر برادری کو ایف بی آر سے جو خدشات ہیں وہ دور ہوں گے ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز آل پاکستان ٹمبر ٹریڈرز ایسوسی ایشن کی جانب سے نئے ٹیکس نظام کے حوالے سے منعقدہ تقریب میں تاجروں سے کیا اس موقع پر آل پاکستان ٹمبر ٹریڈرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین شرجیل گوپلانی، صابر بنگش، عاطف شیخ، فاروق گھانچی، انصار بیگ قادری، احمد شمسی، زبیر علی خان اور دیگر موجو د تھے دانش عارف پٹیل نے کہا کہ فنانس بل کے تحت پاکستان میں 4 ماہ گزارنے والے شخص کو بھی ٹیکس ادا کرنا ہوگا اس قانون کے تحت وہ لوگ جو دگنی نیشنلٹی رکھتے ہیں وہ بھی ٹیکس نیٹ میں آجائیںگے انہوں نے کہا کہ پاکستان میں 22ہزار جیولرز میں سے صرف چند سو ٹیکس ادا کرتے ہیں ایسا نہیں ہونا چاہئے ٹیکس میں اضافے کے لئے تاجر برادری کو تعاون کرنا چاہئے انہوں نے کہا کہ اکتوبر کے بعد حکومت کو کچھ سیکٹر کو رلیف دینا ہوگا اگر نہیں کیا گیا معیشت مزید مشکلات سے دوچار ہوگی انہوں نے کہا کہ تاجر برادری کو اب نوٹس کا سلسلہ بند ہوجائے گا اور اگر کسی کو نوٹس آیا تو پہلے کی طرح وہ فائلوں کے نیچے نہیں دبے گا کیونکہ نوٹس جاری کرنے والے افسران مکمل تحقیقات کے بعد نوٹس جاری کریں گے انہوں نے کہا کہ تاجر برادری کو ٹیکس کی ادائیگی کے لئے پلاننگ آخری دنوں میں نہیں کرنی چاہئے اس کی سارا سال تیاری چاہئے اس سے تاجر برادری کو فائدہ ہوگا کیونکہ نئے قانون کے تحت ٹیکس کی ادائیگی کرنے والے تاجروں کو پریشان نہیں کر سکیں گے اس موقع پر آل پاکستان ٹمبر ٹریڈرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین شرجیل گوپلانی نے کہا کہ تاجر برادری ٹیکس کے دائرے کار میں اضافے کے لئے ہر قسم کا تعاون جاری رکھے گی ہم چاہئے ہیں پاکستان مین ٹیکس کلچر پروان چڑھے اور حکومت اپنے پاوں پر کھڑی ہو۔

سندھ حکومت کی اضافی کرایون کے خلاف صوبے میں کارروائی


sindh information  logo August 18, 2019 | 10:32 PM

سندھ حکومت کی اضافی کرایون کے خلاف صوبے میں کارروائی 2 لاکھ 8 ھزارروپے مسافروں کو اضافی کرایہ واپس, ایک لاکھ روپے جرمانہ کیا گیا.اویس قادر شاہ
اویس شاہ کا سیکریٹری ٹرانسپورٹ کو اضافی کرایون کے خلاف کارروائی نہ کرنے پر عمرکوٹ,کشمور کندھکوٹ, جیکب آباد اور گھو ٹکی کے ریجنل سیکریٹریز کو شوکاز نوٹس جاری کرنے کا حکم
ضافی کرایون کیخلاف عوام ریجنل سیکریٹری ٹرانسپورٹ, موٹروے پولیس اور ٹریفک پولیس کو شکایت درج کروائے فورن کارروائی ہوگی.اویس قاد ر شاہ
کراچی:(نیوزآن لائن)سندھ حکومت کی عید کی چھٹیوں کے بعد مسافروں کی واپسی پر ٹرانسپورٹ مافیہ کی جانب سے مسافرون سے زیادہ کرایہ لینے پر صوبے بھر میں کارروائی, وزیرٹرانسپورٹ اویس شاہ نے مزید اپنے بیان میں کہا ہے کہ 2 لاکھ 8 ھزار روپے مسافر وں کو اضافی کرایہ واپس کروایاگیا اور اضافی کرایہ لینے والی مسافر گاڑیون کاایک لاکھ روپے جرمانہ کیا گیا, کارروائی حیدرآباد, سانگھڑ,سکھر,لاڑکانہ,شکارپور, میرپور خاص, ٹھٹہ, نوابشاہ, بدین, سکھر میں کی گئی.اویس قادر شاہ نے کہاکہ مسافرون سے اضافی کرایہ لینے والی دس مسافر گاڑیون کی روٹ پرمٹ بھی منسوخ کردی گئی ہے, اضافی کرایون کیخلاف کارروا ئی نہ کرنے پر عمرکوٹ, کشمور کندھکوٹ, جیکب آباد اور گھو ٹکی کے ریجنل سیکریٹریز کو شوکاز نوٹس جاری کرنے کیلیے سیکریٹری ٹرانسپورٹ کو احکا مات جاری کردیے گئے ہیں,اضافی کرایون کیخلاف عوام ریجنل سیکریٹری ٹرانسپورٹ, موٹروے پولیس اور ٹریفک پولیس کو شکایت درج کروائے فورن کارروائی ہوگی.

گزشتہ ہفتے کے دوران مہنگائی اوسط شرح0.64 فیصد اضافہ کے ساتھ بڑھ کر 19.01فیصد تک جا پہنچی


bazar August 18, 2019 | 5:12 PM

اسلام آباد:(نیوزآن لائن)حساس قیمتوں کے اعشاریہ(ایس پی آئی )کے مطابق گزشتہ ہفتے کے دوران مہنگائی اوسط شرح0.64 فیصد اضافہ کے ساتھ بڑھ کر 19.01فیصد تک پہنچ گئی جبکہ ڈبل روٹی، آلو، چکن،گھی،چینی اور دالوں سمیت 24اشیائے ضرورت کی قیمتوں میں اضافہ، ٹماٹر،پیاز اور لہسن سمیت 6اشیائے ضرورت کی قیمتوں میں کمی واقع ہوئی جبکہ 23 اشیائے ضرورت کی قیمتیں مستحکم رہی ہیں۔فاقی ادارے شماریات کے مطابق گزشتہ ہفتے کے دوران 8ہزار روپے تک کی آمدنی رکھنے والے طبقے کے لیے مہنگائی کی شرح 0.57فیصد اضافے کے ساتھ15.58 فیصد، 8ہزار ایک روپے12 ہزار روپے تک کی آمدنی رکھنے والے طبقے کیلیے مہنگائی کی شرح0.61 فیصد اضافے کے ساتھ17.04 فیصد، 12ہزار ایک روپے سے 18 ہزار روپے تک کی آمدنی رکھنے والے طبقے کیلیے مہنگائی کی شرح 0.64 فیصد اضافے کے ساتھ17.22 فیصد، 18ہزار ایک روپے سے 35ہزار روپے تک کی آمدنی رکھنے والے طبقے کے لیے مہنگائی کی شرح 064فیصد اضافے کے ساتھ 19.35 فیصد، جبکہ 35ہزار ایک روپے سے زائد آمدنی رکھنے والے طبقے کیلیے مہنگائی کی شرح0.64 فیصد اضافے کے ساتھ21.95 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

حکومت کے نااہل مشیروں نے کاروبارتباہ کرکے رکھ دیاہے۔الیاس میمن


All Karachi anjuman e Tajran August 4, 2019 | 4:44 PM

کراچی: (نیوزآن لائن)آل کراچی انجمن تاجران اتحادکے صدرالیاس میمن نے پاکستان کی بگڑتی ہوئی معاشی صورت حال پرافسوس کااظہارکیاہے۔انہوںنے کہاتاجربرادری آج جتنے عدم تحفظ کاشکارہے اس سے پہلے کبھی نہیں تھی۔ حکومت کے نااہل مشیروں نے کاروبارتباہ کرکے رکھ دیاہے،کپڑے ،چمڑے سمیت بیشترصنعتیں بندہوتی جارہی ہیں،مارکیٹیں ویران ہیں،تاجرساراسارادن دکانوں پرہاتھ پرہاتھ دھرے بیٹھے رہتے ہیں،پیسے کی رولنگ کاروبارنہ ہونے کی وجہ سے کمزورہورہی ہے۔ٹیکس پالیسی کی وجہ سے بزنس کمیونٹی حکومت سے ناراض ہے۔ایف بی آرکے نئے نئے احکامات تاجروں کے خلاف اعلان جنگ کے مترادف ہیں۔حکومت کو صورت حال کاٹھنڈے دل سے جائزہ لینا چاہیے ۔پاکستان کوسب سے زیادہ ٹیکس دے کر چلانے والے کراچی کے لئے وزیراعظم عمران خان کے پاس بالکل وقت نہیںہے ،نہ وہ کراچی کے تاجروں سے ملاقات کرتے ہیں،نہ ان کے مسائل ومشکلات جاننے کی ضرورت محسوس کرتے ہیں۔ان حالات میں تاجروں کے پاس سوائے مزاحمت اور احتجاج کے کوئی اور راستہ نہیں بچتاہے،جسے اختیارکرناہماراقانونی حق ہے۔

صوبے میں پبلک ٹرانسپورٹ کے کرائے طے کرنے کہ لیے سیکریٹری ٹرانسپورٹ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی گئی,اویس شاہ


karachi transport July 29, 2019 | 7:56 PM

کمیٹی گڈز ٹرانسپورٹ,پبلک اور چنگچی رکشہ کا کرایہ طے کرے گی,وزیرٹرانسپورٹ سندھ
سی این جی اور پیٹرول مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا فیصلہ واپس لیا جائے,سندھ حکومت اور ٹرانسپورٹرز کا مطالبہ
کراچی:(نیوزآن لائن) سندھ کے وزیر ٹرانسپورٹ اویس شاہ کا بارش کے دوران اور اندھیرے میں بھی صوبے کے تمام ٹرانسپو رٹرز کے ساتھ کرایوں کا تعین اور مسائل حل کرنے کہ متعلق اہم اجلاس سندھ اسمبلی کے کمیٹی روم میں منعقد ہوا, اجلاس میں سیکریٹری ٹرانسپو رٹ, ریجنلز سیکریٹریز اور صوبے کے تمام ٹرانسپورٹرز, چنگچی رکشہ ایسوسیئیشن کے عہدیداران بھی شریک ہوئے. اجلاس میں پبلک ٹرانسپورٹ کے کرائے طے کرنے کہ لییسیکریٹری ٹرانسپورٹ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی گئی, کمیٹی میں محکمہ ٹرانسپورٹ کے افسران اور صوبے کے تمام ٹرانسپورٹ تنظیموں کے عہدید اران ممبر ہونگیں.اس موقعی پر وزیر ٹرانسپورٹ اویس شاہ نے کمیٹی گڈز ٹرانسپورٹ, پبلک اور چنگچی رکشہ کا کرایہ طے کرے گی, سندھ حکومت عوام پر مزید بوجھ نہیں ڈالنا چاہتی, عوام کی رائے لیے بنا کرایوں میں اضافہ نہیں کیا جائیگا, سی این جی اور پیٹرول مصنوعات میں اضافیکی وجہ سے ٹرانسپو رٹرز نے ابھی تک کرایوں میں اضافہ نہیں کیا, وفاقی حکومت سے مطابہ کرتے ہیں کہ سی این جی اور پیٹرول مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا فیصلہ واپس لیا جائے,وفاق ہر دوسرے روزرات کے اندہیرے میں قیمتیں بڑہارہی ہے, وفاق کو عوام کی کوئی فکر نہیں ہے. انہون نے کہا کہ سندہ حکومت کا ٹرانسپورٹرز کیساتھ پہلااجلاس ہے, ٹرانسپو رٹرز مسافر گاڑیون میں سی این جی سلینڈر نہیں لگائیں گے, عدالتی حکم کے خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے گی. اویس شاہ نے اجلاس میں تمام ٹرانسپورٹرز اور بس مالکان کو خبردار کیا کے عید قربان کے دنوں کوئی بھی ٹرانسپورز کرایوں میں اضافہ نہیں کریگا, اضافہ کرنے والوں کے روٹ پرمٹ منسوخ اور گاڑی بند کی جائے گی,ٹرانسپورزوفاق کی سزا سندھ کی عوام کو نہ دیں, سی این جی اور پیٹرولیم مصنو عات کی قیمتوں میں وفاقی حکومت نے اضافہ کیا ہے, ٹرانسپورٹ چلانا مشکل ہورہا ہے ہمیں ٹرانسپورٹرز کی مشکلات کا احساس ہے,آئندہ کسی بھی ٹرانسپورٹرز کو ٹریفک پولیس اور افسران تنگ نہیں کرینگے, کراچی ٹرانسپورٹ اتحاد کے صدر ارشاد بخاری نے کہا کہ ہمیں خوشی ہیکہ سندھ حکو مت نے کرایوں میں اضافے اور دیگر مسائل کے لیے اجلاس بلایا,وفاق نے اتنی مھنگائی کرد ی ہے کہ اب بسین چلانا بھی مشکل ہوگیا ہے۔

فیڈریشن آف پاکستان چیمبرزآف کامر س اینڈ انڈسٹر ی کے صدر انجینئر داروخان اچکزئی ای سی او چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کی ایگزیکٹو کمیٹی میں شرکت کیلئے استنبول روانہ


fpcci news July 28, 2019 | 4:25 PM

کراچی:(نیوزآن لائن)فیڈریشن آف پاکستان چیمبرزآف کامر س اینڈ انڈسٹر ی کے صدر انجینئر داروخاناچکزئی ای سی او چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کی ایگزیکٹو کمیٹی میں شرکت کیلئے استنبول روانہ ہونگے۔ اس کمیٹی کا انعقاد 30-7-2019کو ہوگا جس میں ای سی او ممالک کے تمام قومی چیمبر ز کے سربراہان جن میںافغانستان،آزربائیجان،تاجکستان،ازبکستان،ترکمانستان،قازقستان،قرگزستان،پاکستان،ایران اور تر کی شرکت کریں گے۔
صدر ایف پی سی سی آئی ایگزکیٹو کمیٹی کی میٹنگ جو کہ انقرہ میں ٹی او بی بی کے تعاو ن سے منعقد کی جا رہی ہے سے خطاب کریں گے۔ اس وقت ای سی او،سی سی آئی،کی صدارت افغانستان جبکہ اس کا سیکریٹریٹ ٹی او بی بی کے پاس ہے۔ صدرایف پی سی سی آئی میں میٹنگ میں ای سی او ممالک کے مابین موجودہ تجا رتی مسائل کو اجاگر کریں گے ان میں ٹرانسپورٹ،سرمایہ کا ری،ثا لثی،سیاحت،معاشی تعاون تنظیم بر ائے آزاد تجا ر تی معاہدے چھوٹی اور درمیانے درجے کی صنعتوں کے مسائل خواتین کی کاروبا ری صلاحیت جیسے مسائل شامل ہیں۔ایگزیکٹو کمیٹی میٹنگ سے پہلے کمیٹی کی میٹنگز کا انعقاد ہوگا۔
ای سی او ممالک کی کل شرح نمو1.8ہے۔ اس کے علاوہ ای سی او،کا علاقائی تجارت کا حجم 64.6بلین ہے جو کہ دیگر علاقائی بلا کس کے مقابلے میں کم ہے۔ ای سی او کے ممبر ممالک کا عالمی تجارت میں 2%حصہ ہے۔ دس ای سی او،ممالک میں سے تین ممالک سمندری بندرگاہوں سے منسلک ہیں جبکہ بقیہ سات ممالک ہیں۔ صدر ایف پی سی س سی آئی پراجیکٹ سے متعلقہ معاشی مواقعوں کو بھی اجاگر کریں جو نہ صرف پاکستان کیلئے اہم ہے بلکہ پورے ای سی او خطے کیلئے بھی اہم ہے۔ صدرا ایف پی سی سی آئی،ای سی او خطے میں ذرائع نقل وحمل کی سہولیات کی بہتر ی پر بھی روشنی ڈالتے ہوئے ای سی او ٹرین پراجیکٹ کی ضرورت پر بھی زور دیں گے۔اس کے علاوہ صدر ایف پی سی سی آئی،ای سی او، ثالثی سینٹر کے ابتدائی عمل درآمد اور آپر یشنلا ئز یشن پر بھی تبا دلہ خیال کریں گے۔
صدر ایف پی سی سی آئی پاک ترکی جوائنٹ چیمبر آف کامرس جو کہ ایف پی سی سی آئی اور کے درمیان ایم او یو کے بعد وجود میں آیا کی پہلی میٹنگ میں بھی شرکت کریں گے۔دوطرفہ تجارت کا فروغ اور دونوں ممالک کے درمیان موجو دہ معاشی تعلقات اس میٹنگ کے اہم ایجنڈا ز میں شامل ہیں۔

جنوبی ایشیائی سیاست پر تصنیف کردہ انگریزی کتاب کی رونمائی


Pic-South Asia in Perspective July 28, 2019 | 4:03 PM

پاکستان کے لیے سماجی و اقتصادی ترقی کا حصول ملک کی بقا کا مسئلہ بن چکا ہے ۔ خواجہ عامر، مصنف
کراچی :( نیوزآ ن لائن): سماجی و اقتصادی ترقی کی عالمی دوڑ میں پاکستان سمیت تیسری دنیا کے ممالک کے لیے وقت تیزی سے ہاتھ سے نکلتا جارہا ہے اور آنے والے عشرے میں پسماندہ خطے جدید ٹیکنالوجی سے لیس ترقی یافتہ اقوام کی خوراک بن چکے ہوں گے۔ ان خیالات کا اظہار معروف انگریزی مصنف و تجزیہ کار جناب خواجہ عامر نے اپنی نئی کتاب “جنوبی اشیا کا علاقائی تناظرکی تقریب رونمائی میں کیا۔ اپنے خطاب میں کتاب کے مصنف خواجہ عامر نے کہا کہ پاکستان کے لیے سماجی و اقتصادی ترقی کا حصول ملک کی بقا کا مسئلہ بن چکا ہے جس کے لیے سیاسی استحکام ناگزیر ہے۔ خطہ جنوبی ایشیا کی بدلتی ہوئی سیاسی صورتحال اور سماجی و اقتصادی رویوں پر تصنیف کردہ کتاب “جنوبی اشیا کا علاقائی تناظر” 50مختلف مضامین کا پُر تحقیق، جامع و مفصل مجموعہ ہے جو اس سے قبل سائوتھ ایشیا نامی عالمی شہرت یافتہ انگریزی جریدے میں شائع ہوچکے ہیں۔ ان مضامین میں اعداد و شماراور موجودہ حقائق کی روشنی میں پاکستان ، انڈیاو بنگلا دیش سمیت پورے جنوبی ایشیا میں نمو پذیر سیاسی و معاشرتی رجحانا ت کا سیر حاصل جائزہ پیش کیا گیا ہے ۔ کتاب سیاسیات سے منسلک محققین، صحافی حضرات، طالب علموں و عام قاری کے لیے لا نہایت دلچسپ و آسان پیرائے میں لکھی گئی ہے۔ موجودہ کتاب خواجہ عامر کی تصنیف کردہ تیسری کتا ب ہے ۔ انگریزی مصنف خواجہ عامر نے اپنے صحافتی کیر ئیر کا آغاز مارننگ نیوز نامی اخبار سے کیا اور اس کے بعد عرب نیوزاور خلیج ٹائمز کے ساتھ منسلک رہے۔بعد ازاں انہوں نے ویکلی میگ اور ماہنامہ سائوتھ ایشیا کے لیے اپنی خدمات انجام دیںاور ایک طویل عرصے سول ایوی ایشن اتھارٹی کے شعبہ تعلقات عامہ کے ساتھ بھی منسلک رہے۔

ایسیٹ ڈکلیریشن اسکیم کی تاریخ میں 3 جولائی تک توسیع


Hafeez-Sheikh-1-750x369 June 30, 2019 | 8:26 PM

اسلام آباد:(نیوزآن لائن) حکومت نے اثاثے ظاہر کرنے کی اسکیم کی تاریخ میں 3 جولائی تک توسیع کر دی ہے ،مشیر خزانہ شیخ عبد الحفیظ نے کہا کہ ہم ایسیٹ ڈکلیریشن اسکیم کے آخری مراحل میں ہیں، شہریوں سے اپیل ہے اسکیم سے فائدہ ضرور اٹھائیں،تفصیلات کے مطابق اسلام آباد میں حکومت کی معاشی ٹیم نے نیوز کانفرنس کی، معاشی ٹیم میں مشیر خزانہ، وزیر مملکت حماد اظہر اور چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی شامل تھے، مشیر خزانہ عبد الحفیظ شیخ نے کہا ہے کہ بجٹ کا محور پاکستان کے عوام ہیں، اللہ کا شکر ہے بجٹ اچھے انداز میں پاس ہوا، مشکل وقت سے نکلنے کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔مشیر خزانہ نے کہا کہ اپنی جائیداد کو ٹیکس نیٹ میں لانے کا ایسیٹ ڈکلیریشن اسکیم آسان طریقہ ہے، بے نامی جائیداد کے لیے ایک قانون ہے جو کافی سخت سزاں پر مبنی ہے، ہم ایک کمیشن بنا رہے ہیں جو اسکیم کے بعد بے نامی جائیدادوں کے پیچھے جا سکتی ہے، اس لیے ایسیٹ ڈکلیریشن اسکیم سے فائدہ اٹھانے والوں کے لیے 3 روز بڑھا رہے ہیں۔
مشیر خزانہ نے کہا کہ حکومت آئی تو سرکلر ڈیٹ 31 ہزار ارب روپے تک پہنچ گیا تھا، امپورٹ پر 60 بلین ڈالر خرچ کر رہے تھے جب کہ ایکسپورٹ صرف 20 بلین ڈالر تھی، اس صورت حال میں سب سے پہلے سرکلر ڈیٹ کم کرنے کے لیے قدم اٹھائے گئے، امپورٹڈ اشیا پر ٹیرف لگائے گئے جنھیں بجٹ میں بھی برقرار رکھا گیا۔عبد الحفیظ نے کہا کہ کرنٹ اکانٹ خسارے کو ساڑھے 13 سے گرا کر 7 ملین ڈالر کرنے کا ہدف ہے، دوست ممالک کے ذریعے ہمیں 9.2 بلین ڈالرز ملے، سعودی عرب سے 3.2 بلین ڈالر کا تیل 3 سال کے ادھار پر لیا، قطر سے 3 بلین ڈالر کا معاہدہ ہوا۔مشیر خزانہ کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت نے اس سال بجٹ میں 50 ارب روپے کم کرنے کا فیصلہ کیا، تمام بڑے افسران کی تنخواہیں نہیں بڑھائی گئیں، کابینہ کے ممبران کی تنخواہ 10 فی صد کم کی گئی۔انھوں نے کہا کہ مسلح افواج کی لیڈر شپ نے بجٹ میں اضافہ نہ کرنے کا فیصلہ کیا، بجٹ میں اضافہ نہ کرنے پر جنرل قمر جاوید باجوہ کا شکریہ ادا کرتا ہوں، ہم سب نے مل کر ملک کی معیشت کو بہتر بنانا ہے۔مشیر خزانہ نے کہا کہ حکومت صرف کم زور طبقے پر پیسا خرچ کرے گی، خدا نخواستہ بجلی کی قیمت بڑھے تو 300 یونٹ استعمال کرنے والوں پر بوجھ نہیں ڈالا جائے گا، 300 یونٹ تک استعمال کرنے والے صارفین کے لیے 216 ارب روپے رکھے ہیں۔ دہشت گردی کا سامنا کرنے والے قبائلی علاقے کے لوگوں کے لیے 152 ارب روپے رکھے ہیں۔عبد الحفیظ شیخ کا کہنا تھا کہ انڈسٹریلسٹ کو بجلی، گیس اور قرضوں کے لیے حکومت سبسڈی فراہم کرے گی، صنعت کار کے لیے خام مال کی امپورٹ پر بھی ٹیکس صفر کیا جائے گا، حکومت نے خام مال کی ٹیرف لائن سے ٹیکس ختم کر دیا ہے، انڈسٹریز کے لیے کسی ایکسپورٹ پر ٹیکس نہیں لگے گا، انڈسٹریز سے کہا ہے کپڑا پاکستانی مارکیٹ میں بیچیں گے تو اس پر ٹیکس دینا ہوگا، 1800 ارب کپڑا ایکسپورٹ پر ہمیں 6 ارب کا ٹیکس ملتا ہے۔انھوں نے یہ بھی کہا کہ معیشت کی بہتری کے لیے سخت سے سخت اقدامات سے گریز نہیں کیا جائے گا۔

عالمی شہرت یافتہ سائنسی کتاب پاکستان میں متعارف


god and god of science book June 30, 2019 | 7:53 PM

امریکہ میں شائع کردہ انگریزی کتاب “خدائے حق اور خدائے سائنس” میں عقیدہ توحید اور سائنسی علوم کے نظری و عقلی تصادم پر روشنی ڈالی گئی ہے۔
کراچی :( نیوزآن لائن): دوہزار سترا میں امریکہ میں شائع کردہ عالمی شہرت یافتہ انگریزی کتاب “خدائے حق اور خدائے سائنس”
پاکستان میں متعارف کردی گئی ہے۔ کتاب میں عقیدہ توحید اور سائنسی علوم کے مابین نظری تصادم پر روشنی ڈالی گئی ہے اور اللہ کے وجود اور اسلام کی آفاقی حقانیت پر ناقابلِ تردید دلائل اور الحاد و کفر پرستی کو انسانیت کے ساتھ ظلمَ عظیم تعبیر کیا گیا ہے۔کتاب کے مصنف سےّد حسن رضا جعفری امریکی ریاست ٹیکساس کے رہائشی ہیں اور پیشہ کے اعتبار سے پیھپھڑے کے سرطان کے معالج و طبّی محقق ہیں اور ہیوسٹن میں واقع یوٹی ہیلتھ میک گورن اسکول آف میڈیسن میں میں سرطانی علوم پر درس و تدریس کے فرائض انجام دیتے ہیں۔
مصنف نے اپنی کتاب “خدائے حق اور خدائے سائنس” میں انتہائی مدلل انداز میں خداکے وجود،عقیدہ توحید کی حقانیت اور سائنسی علوم کی ترویج و توسیع میںمسلمانوں کے کردار پر مغربی و الحادپرستوں کی تنقیدکا بھر پور جواب دیا ہے اور الحاد و کفر پرستی کو انسان کی فکری و روحانی بالیدگی کی راہ میں سّدِ راہ قرار دیتے ہوئے انسانیت کے لیے نا سور قرار دیا ہے اور واضح کیا کہ کس طرح عقیدہِ آخرت سے انکار نے انسانی فکر کو انتہائی پسماندہ، محدود اوردنیا میں انسانی وجود کے اصل مقصد کو مجرمانہ حد تک پسِ پشت ڈال دیا ہے ۔ امریکی طباعتی مرکزاسلامی پبلشنگ ہائوس کے زیرِ اہتمام شائع کردہ کتاب میںمیں ثابت کیا گیا ہے کہ وحی الٰہی اور انسانی عقل میں کوئی تصادم نہیں اور دونوں کا صحیح اطلاق حقیقت تک رسائی کا باعث بنتا ہے۔
369صفحات پر مشتمل کتا ب”خدائے حق اور خدائے سائنس” میں اعلیٰ تعلیم یافتہ اور نامی گرامی تعلیمی اداروں سے سند یافتہ افراد کی نظریہ توحید سے فرار، خدا کے وجود سے انکار اور الحادپرستی کو اپنانے کی وجوہات کاتفصیلی جائزہ لیا گیا ہے اور قرآنی تعلیمات کی روشنی میں تمام تر فکری کوتاہیوں اور پُر غلط نظر یات کا انتہائی ٹھو س اور ناقابل تردید جواب دیا گیا ہے۔ کتاب پر تبصرہ کرتے ہوئے کینیڈا میں مقیم ممتاذ عالم دین سےّد محمد رضوی کی کہا کہ “خدائے حق اور خدائے سائنس” خصوصی طور پرسائنسی علوم سے وابستہ مسلمان افراد کے لیے باعثِ محرک ہے اور انہیں اپنے دینی عقائد کا انتہائی مدلل اور ناقابلِ رد اندازمیں دفاع کرنے کے قابل بناتی ہے۔

برآمدات بڑھانے کے لیے دی جانیوالی میں سبسڈی آئندہ مالی سال بھی جاری رہے گی۔ عبد الرزاق داود


Abdul-Razak-Dawood June 6, 2019 | 3:59 PM

اسلا م آباد:(نیوزآن لائن)وفاقی مشیرِ تجارت عبد الرزاق داود نے کہا ہے کہ برآمدات بڑھانے کے لیے دی جانیوالی میں سبسڈی آئندہ مالی سال بھی جاری رہے گی۔تفصیلات کے مطابق حکومت ملک میں تجارتی خساریمیں کمی اوربرآمدات میں اضافے کے لیے کوششیں کررہی ہے اور اس مقصد کے لیے برآمدکنندگان کوسبسڈی جاری رکھی جائیگی ۔مشیرتجارت رزاق داودکاکہناہیکہ تجارتی خساریمیں کمی ہورہی ہے۔برآمدات میں سات فیصد کااضافہ ہواہے۔رجحان کو جاری رکھنے کے لیے مراعات جاری رکھی جائیں گی۔وفاقی مشیرتجارت کا کہناتھاکہ گارمنٹس کی برآمدات میں انتیس فیصد، سیمنٹ پچیس فیصد،باسمتی چاول اکیس فیصدجبکہ فٹ وئیرز کی برآمدات چھبیس فیصد بڑھیں۔ جبکہ درآمدات کی مالیت میں چار ارب ڈالر کی کمی ہوئی ہے۔مشیر تجارت نے یہ بھی بتایاکہ برآمدی سیکٹرکوبجلی اورگیس پردی جانے والی سبسڈی آئندہ مالی سال بھی جاری رکھی جائیگی ۔

صوبائی وزیر توانائی امتیاز شیخ اور صوبائی وزیر آبپاشی سید ناصر حسین شاہ کے مابین تھر کول پاور منصوبوں کو پانی کی فراہمی کے لئے اجلاس۔


thar coal project May 20, 2019 | 4:01 AM

کراچی:(نیوزآن لائن) صوبائی وزیر برائے توانائی امتیاز احمد شیخ اور صوبائی وزیر آبپاشی سید ناصر حسین شاہ کی مشترکہ صدارت میں تھر کے مختلف پاور پلانٹس کو پانی کی فراہمی کے سلسلے میں منعقدہ اجلاس میں تھر کول پراجیکٹس کو مکھی فرش کینال سے پانی پہنچانے پر بریفنگ دی گئی۔بریفنگ میں بتایا گیا مکہی فرش کینال سے تھر کول پراجیکٹس تک پانی آئندہ سال کے آغاز تک پہنچایا دیا جائے گا اور پانی فراہمی کے اس منصوبے پر 20 ارب روپے تک لاگت آئے گی۔اجلاس کو بتایا گیا کہ تھر کول منصوبوں کو پانی کی مطلوبہ فراہمی سے زیر تعمیر بجلی گھر بروقت مکمل ھوسکیں گے ،تعمیر شدہ بجلی گھروں کی پیداور بڑھ جائے گی اور نئے بجلی گھروں کی تعمیر کا آغاز ھوگا۔اجلاس کو بتایا گیا کہ تھر کول بلاک 2 میں 4 ھزار میگا واٹ کے منصوبوں پر تھل نووا،تھر انرجی اور صدیق سنز لمیٹڈ کمپنیز کام کررہی ہیں جبکہ تھر کول بلاک 1 میں شنگھائی الیکٹرک 1320 میگا واٹ بجلی بنانے کے منصوبے پر کام کررہی ہے۔اجلاس میں سندھ کے محکمہ توانائی،محکمہ آبپاشی اور تھر کول پاور منصوبوں میں کام کرنے والی کمپنیوں کے افسران نے شرکت کی اور نقشوں اور چارٹوں کی مدد سے پانی فراہمی کے منصوبے پر مفصل پریزینٹیشن دی۔

پاکستان سدرن افریقہ ٹریڈ فیڈریشن کے وفد کے اعزاز میں رفیق مجید کا عشائیہ


Rafiq SA PR April 28, 2019 | 3:29 PM

جنوبی افریقی وفد کو پاکستان لانے کا مقصد پاکستانی برآمدات میں اضافہ اور ملکی معیشت کو ترقی دینا ہے۔رفیق میمن
کراچی:(نیوزآن لائن)پاکستان سدرن افریقہ ٹریڈ فیڈریشن کے چیئرمین محمد رفیق میمن نے کہا ہے کہ سدرن افریقہ کے ممالک اور پاکستان کے مابین تجارت کے فروغ کے وسیع امکانات ہیں،جنوبی افریقہ سے تاجروں اور سرمایہ کاروں کو پاکستان کا دورہ کرانے کا مقصد ملک میں سرمایاکاری اور برآمدات میں اضافے کے ذریعے پاکستانی معیشت کو بہتر بنانا ہے تاکہ مقامی سطح پر پیداواری سرگرمیوں میں اضافہ ہو اور عام لوگوں کو روزگار میسر آسکے۔پاکستان کے دورے میں مختلف تجارتی وفود اور ٹریڈ ایسوسی ایشنز سے ملاقاتوں میں اس بات پر زور دیا گیا کہ پاکستانی تاجر اور صنعتکار بین الاقوامی سطح پر اپنی مصنوعات متعارف کرانے کیلئے جدید طریقوں سے استفادہ کریںاور بین الاقوامی نمائشوں اور ٹریڈ ایونٹس میں شرکت کے ذریعے پاکستانی مصنوعات کی مارکیٹنگ کریں۔پاکستان سدرن افریقہ ٹریڈ فیڈریشن اس سلسلے میں حکومت ِ پاکستان اور پاکستانی تاجر اور صنعتکار برادری کے ساتھ ہر طرح کا تعاون کرنے کے لئے تیار ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے گذشتہ دنوں 17رکنی وفد کے ہمراہ پاکستان آمد کے موقع پر اپنے وفد کے اعزاز میں طلحہ انٹر پرائز اور اسکائی ویز انٹرنیشنل کے چیف ایگزیکٹیو محمد رفیق مجید کی جانب سے دیئے گئے استقبالیہ میں کیا۔جس میں مراکش کے اعزازی قونصل جنرل مرزا اشتیاق بیگ، ممتاز صنعت کار مرزا اختیار بیگ سمیت کراچی کے مختلف تاجروں اور صنعت کاروں نے شرکت کی اور سائوتھ افریقہ سے آئے ہوئے تجارتی نمائندوں کے ساتھ مشترکہ تجارتی منصوبوں کے متعلق تبادلہ خیال کیا،تقریب میں ایڈیشنل سیکریٹری ایگریکلچر شکیل احمد دھنگرا،شکیل جعفری اور دیگر شخصیات بھی موجود تھیں۔اس موقع پر پرتکلف عشایئے اور خوبصورت محفلِ موسیقی کا اہتمام بھی کیا گیا جبکہ رفیق مجید کی جانب سے مہمانوں کو شیلڈ ،فلاورز اور روایتی اجرک کے تحائف پیش کئے گئے۔

ایف بی آرکے چھاپے بلاجواز،تاجروں نے مارکیٹوں کی تالابندی کی دھمکی دیدی


All Karachi anjuman e Tajran April 21, 2019 | 7:47 PM

تاجر چورنہیں وہ ٹیکس دیتے ہیں،ایف بی آرکے ذریعے ہراساںکرنا مناسب نہیں۔تاجررہنما
کراچی: (نیوزآن لائن)شہرکی مارکیٹوں میں ایف بی آرکے بلاجوازچھاپوں اورمعاملات میں مداخلت پرکراچی کی تاجر برادری سراپا احتجاج،مارکیٹوں کی تالابندی کی دھمکی دے دی۔طارق روڈٹریڈرزکے الیاس میمن، راشدمحمود،سلیم اُنڑ،صدرالائنس کے عبدالصمداور طلعت محمودنے اپنے ردعمل کا اظہارکرتے ہوئے کہاہے کہ حکومت کی ناقص پالیسیوں سے ملکی معیشت پرخراب اثرات مرتب ہورہے ہیں۔ایف بی آرکے اہلکارمارکیٹوں میں آکر تاجروں کو بلاوجہ ڈراتے اور دھمکاتے ہیں،ان رہنماؤں کاکہنا ہے کہ تاجر چورنہیں ہیں وہ ٹیکس دیتے ہیں،انہیں اس طرح ایف بی آرکے ذریعے ہراساںکرناکسی طرح بھی مناسب نہیں ہے۔اگر حکومت نے اپنارویہ تبدیل نہیں کیا اور ایف بی آرکے اہل کاراسی طرح مارکیٹوں میں چھاپے مارتے رہے اور تاجروں کوڈراتے دھمکاتے رہے تو تاجر اپنی دکانیں بند کرنے پر مجبورہوجائیں گے۔رہنماؤں نے کہاکہ ایف بی آرکے خوف سے بہت سے تاجروں نے بینکوں کے ذریعے لین دین بندکردیاہے اور نقدمیں کاروبارکررہے ہیں ،یہ صورت حال ملکی معیشت کے لئے بھی اچھی نہیں ہے،حکومت کوچاہیے کہ وہ اس حوالے سے تاجروں سے مشاورت کے بعد کوئی پالیسی نافذکرے تو زیادہ بہترہوگا ،ورنہ تنگ آکر تاجر سڑکوں پرآکر احتجاج کرنے پرمجبورہوجائیں گے۔

کووا کراچی کا و ز یر اعظم پاکستان عمران خان اور میئر کراچی وسیم اختر کو باغ ابن قاسم کو دوبارہ قبضہ مافیا سے آزاد کراکے عوام کے لئے افتتاح کرنے پر اظہار تشکر


kowa karachi officers March 31, 2019 | 10:30 PM

کراچی:(نیوزآن لائن)کراچی آفیسرز ویلفیئر ایسوسی ایشن کے قائمقام چیئرمین عبدالحفیظ انصاری نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان اور میئر کراچی وسیم اختر کو باغ ابن قاسم کو دوبارہ قبضہ مافیا سے آزاد کراکے عوام کے لئے افتتاح کرنے پر اظہار تشکر اور کراچی کے وزیر اعظم کے 162ارب کے پیکیج کے اعلان کا خیر مقدم کرتے ہوئے کراچی کی خدمت کے لئے نیک شگون قرار دیا ہے ۔ کووا کراچی نے کراچی کے تمام افسران کی جانب سے تعاون اور میئر کراچی کی کاوشوں کو خراج تحسین پیش کیا ہے۔

یو این ڈی پی کا چیزاپ شاپنگ سٹی کے ساتھ اشتراک بے روزگار نوجوانوں کے لیے تربیتی پروگرام کا انعقاد


undp March 31, 2019 | 2:42 PM

ریٹیل سیکٹر زرعی و صنعتی شعبوں کے بعد روزگارفراہم کرنا والا تیسرا بڑا سیکٹر ہے ۔ سلمان بشیر ، چیف ایگزیکٹو، چیزاپ شاپنگ سٹی
کراچی :( نیوزآن لائن) اقوام متحدہ ترقیاتی پروگرام (یو این ڈی پی) نے چیزاپ شاپنگ سٹی کے اشتراک سے بے روزگار نوجوانوں کے لیے تربیتی پروگرام کا آغاز کیا ہے جس کے تحت منتخب کردہ افراد کو ریٹیل سیکٹر سے متعلقہ فنون میں بامعاوضہ تربیت فراہم کی جارہی ہے۔ پروگرام کے ابتدائی مرحلے میں کراچی کے پسماندہ علاقوں بشمول اورنگی ٹائون، لیاری، کیماڑی و خدا کی بستی سمیت دیگر علاقہ جات سے میٹرک پاس بے روزگار نوجوانوں کو 23روزہ تربیتی پروگرام کے تحت نظری و عملی تربیت فراہم کی جارہی ہے ۔ 23روزہ تربیتی پروگرام 39گھنٹے کلاس روم اور70گھنٹے آن جاب ٹریننگ پر مشتمل ہے جس میں کمیونیکشن، سیلنگ اسکلز، ریٹیل آپریشن ، تعمیر شخصیت، ٹیم ورک سمیت متعدد موضوعات کا احاطہ کیا گیا ہے جبکہ زیرِ تربیت نوجوانوں کو فی کس 25000روپے مشاہرہ بھی ادا کیا جارہا ہے۔ تربیتی پروگرام کے اختتام پر کامیاب شرکاء میں یواین ڈی پی کی جانب سے خصوصی اسناد تفویض کی جائیں گی۔
23روزہ تربیتی پروگرام کے ابتدائی سیشن سے خطاب کرتے چیزاپ شاپنگ سٹی کے چیف ایگزیکٹوجناب سلمان بشیر نے کہا کہ پاکستان میں ریٹیل سیکٹر ایک ابھرتا ہوا شعبہ ہے جو ملک میںمعاشی فروغ کے ساتھ ساتھ روزگارکے ان گنت مواقع پیدا کرنے میں کلیدی کردار ادا کررہا ہے ۔ اپنے خطاب میںچیزاپ کے ڈائیریکٹر مصطفی بشیرنے کہا کہ چیزاپ ریٹیل ایجوکیشن کے فروغ کے لیے کراچی کے بزنس اسکولز اورفنی تعلیمی اداوں سے رابطہ کرکے انہیں متعلقہ تربیتی پروگراموں کے انعقاد کیلیے آمادہ کرنے کی کوشش کررہاہے۔ اس موقع پر چیز اپ کے سربراہ برائے شعبہِ افرادی قوت جناب محمد ریحان صدیقی نے کہا کہ یو این ڈی پی اور چیزاپ شاپنگ سٹی کے اشتراک سے شروع کردہ یوتھ ڈویلپمنٹ پروگرام ریٹیل کریئر سے متعلق آگاہی کے ساتھ ساتھ روزگار کے حصول میں معاون ثابت ہوگا۔

پاکستان پیپلزپارٹی کراچی کوروشنی اور امن کا شہربنانے کیلئے بھرپور اقدامات کررہی ہے، محمد فیاض اعوان


Street Lights March 17, 2019 | 4:52 PM

کراچی:(نیوزآن لائن) چیئرمین بلدیہ جنوبی ملک محمد فیاض اعوان نے کہاہے کہ پاکستان پیپلزپارٹی کراچی کوروشنی اور امن کاشہربنانے کیلئے بھرپوراقدامات کررہی ہے ہماری پارٹی کامنشورعام آدمی کی زندگی میں خوشحالی لاناہے بلدیہ جنوبی میں جاری ترقیاتی منصوبوں کے تیزرفتار سفرکے ثمرات عوام تک پہنچناشروع ہوگئے ہیں اس مقصد کیلئے مجھے میرے تمام کونسل اراکین کابھرپورتعاون حاصل ہے ان خیالات کااظہارانہوں نے لیاری زونل آفس میں بلدیہ جنوبی کیجانب سے خریدی گئی اسٹریٹ لائٹس کی دونئی گاڑیوں کی چابیاں محکمہ مکینیکل اینڈ الیکڑک (ایم اینڈ ای) کے ڈرائیورزکے حوالے کرنے کے موقع پر کیا چیئرمین الیکڑک کمیٹی امین میمن ، چیئرمین مکینیکل کمیٹی احمدگھانچی، ایس ای ایم اینڈ ای شکیل مغل، ایکسین دلبرماتیلو، میکینیکل آفیسرمحمداقبال ودیگر بھی اس موقع پر موجود تھے چیئرمین ملک محمد فیاض اعوان نے کہا کہ پیپلزپارٹی کاہرنمائندہ عوامی خدمت کیلئے منتخب ہواہے دستیاب وسائل اور افرادی قوت کومربوط پالیسی ذریعے ضلع جنوبی کو مثالی ڈسڑکٹ بنانے کیلئے ہرممکن اقدامات کررہے ہیںہمارایقین ہے کہ عوامی خدمت کا جذبہ اور اپنے فرائض کی ادائیگی نیک نیتی سے کی جائے تو وسائل کی کمی مقاصد کے حصول میں رکاوٹ نہیں بن سکتی ہم سب عوام کی خدمت پرمامور ہیں اور عوام کو بلدیاتی سہولیات کی فراہمی کیلئے دستیاب وسائل کو مربوط حکمت عملی کے تحت استعمال کررہے ہیں چیئرمین ملک محمد فیاض کامزیدکہنا تھا کہ دونئی گاڑیوں کی آمدسے محکمہ ایم اینڈ ای کی کارکردگی میں مزیدبہتری آئی گی اور شاہرائوں ، سڑکوں اور رائونڈ ابائوٹس میں اسٹریٹ لائٹس کوروشن رکھنے میں بہت مددملے گی ہماری بھرپور کوشش ہے کہ اسٹریٹس لائٹس کی مزید نئی گاڑیوں کے فلیٹ کومحکمہ ایم اینڈ ای میں شامل کیا جائے ۔

ایف بی آر نے سندھ حکومت اور دیگر امیراور پر تعیش زندگی گزارنے والے سرکاری افسران کے خلاف تحقیقات شروع کردی


FBR logo March 10, 2019 | 6:27 PM

اسلام آباد:(نیوزآن لائن)ایف بی آر نے سندھ حکومت اور دیگر امیراور پر تعیش زندگی گزارنے والے سرکاری افسران کے خلاف گھیرا تنگ کر دیا۔تفصیلات کے مطابق فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے سندھ حکومت کے سو غیر رجسٹرڈ افسران کو ٹیکس نیٹ میں لانے کے لئے نوٹس تیارکر لیے اور سرکاری افسران کی پراپرٹی اور دیگر املاک ایف بی ار کے ریڈار پر آگئی ہے۔ایف بی آر ذرائع کا کہنا ہے شہر بھر میں کروڑوں کمانے والے پراپرٹی مالکان کے لئے بھی نوٹس تیارکر لیے ہیں ، پہلے مرحلے میں بڑے دو ہزار پراپرٹی مالکان کو نوٹس ارسال کئے جارہے ہیں۔

بورڈ آف روینیو کی جانب سے جی پی آئی نظام کے مربوط ہونے سے نیب ، ایف آئی اے و دیگر متعلقہ محکموں کو زمینوں پر ناجائز تجاوزات کے معاملے میں حقائق سے آگاہی ملے گی


sindh board of revenue March 3, 2019 | 6:29 PM

کراچی :( نیوزآن لائن): سندھ بورڈ آف ریوینیو نے عوام کو آگاہی دیتے ہوئے بتایا ہے کہ انکے تیار کردہ جیو گرافک معلوماتی نظام کے انتظامی یونٹ نے سیٹلائیٹ کے سروے کے بعد وقت بوقت زمینوں پر ناجائز تجاوزات کے حوالے سے سرکاری زمینوں پر مختلف اوقات میں تجاوزات قائم ہوئے تھے، جن پر غیر قانونی مالکان یا درخواست کنندہ اور لیز ہولڈر کا رکارڈ مرتب کیا جا رہا ہے۔سندھ بورڈ آف ریونیو کے مطابق جیوگرافک معلوماتی نظام کے انتظامی یونٹ کی اس سرگرمی سے ایف آئی اے، نیب ، اینٹی انکرو]مینٹ سیل اور دیگر تفتیشی ادارے اس قابل ہوجائیں گے کہ وہ سرکاری زمین پر ناجائز تجاوزا ت کی بنیاد ی اہمیت کی معلومات بورڈ آف ریوینیو سے حاصل کر سکتے ہیں۔

حکومت کا ملک بھر میں موجود439 یوٹیلٹی اسٹورز بند کرنے کے احکام جاری


utility store February 24, 2019 | 6:13 PM

اسلام آباد :( نیوزآن لائن)حکومت نے حکومت کے439 یوٹیلٹی اسٹورز بند کرنے کے احکام جاری کردیے ،اطلاعات کے مطابق موجودہ حکومت نے یوٹیلٹی اسٹورز کو مکمل طور پر ختم کرنے کا فیصلہ کیا تو یوٹیلیٹی اسٹور ملازمین کی جانب سے احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جس پر حکومت نے اپنا فیصلہ واپس لے لیا اور یو ٹیلٹی اسٹور کارپوریشن کو20ارب کا بیل آٹ پیکیج دینے کا فیصلہ کیا جس پر ملا زمین کی جانب سے احتجاج ختم کر دیا گیا لیکن کئی ماہ گزر جانے کے بعد بھی بیل آٹ پیکیج کی رقم کی ادائیگی نہ ہو سکی جس پر یوٹیلٹی اسٹورز کے حالات مزید خراب ہوتے گئے تاہم اب حکومت نے 439 یوٹیلٹی اسٹورز بند کرنے کے احکام جاری کر دیے ہیں۔