: تازہ ترین

تازہ ترین ویڈیو

عظیم گلوکار نصرت فتح علی خان کو مداحوں سے جدا ہوئے19 برس بیت گئے


nusrat fateh ali khan August 16, 2016 | 2:19 PM

لاہور:(نیوزآن لائن)عظیم گلوکار نصرت فتح علی خان کو مداحوں سے جدا ہوئے19 برس بیت گئے۔فن موسیقی کی یہ عظیم ہستی تیرہ اکتوبرانیس سو اڑتالیس کو فیصل آباد میں استاد فتح علی خان کے گھر پیدا ہوئی۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ نصرت کے والد انہیں قوال نہیں ڈاکٹر بنانا چاہتے تھے۔ نصرت ڈاکٹر تو نہ بن سکے مگر ان کی آواز دلوں کا قرار ضرور بن گئی۔ استاد مبارک علی کی شاگردی میں رہنے والے نصرت کو اصل عوامی مقبولیت اپنی شہرہ آفاق قوالی حق علی علی سے ملی۔نصرت فتح علی خان نے بطور قوال دم مست قلند مست مست سے ملک گیر شہرت حاصل کی اور انہوں نے قوالی کی صنف میں مغربی انداز متعارف کروایا جسے دنیا بھر میں بھرپور پزیرائی حاصل ہوئی ۔بین الاقوامی سطح پر ان کی شہرت ورلڈ میوزک آرٹ اینڈ ڈانس فیسٹیول سے شروع ہوئی جس کے بعد نصرت فتح علی خان کی آواز کا جادو سر چڑھ کر بولنے لگا۔نصرت نے کئی مشہور شعرا کے لکھے گیت گا کر ان کے کلام کو امر کر دیا اور بھارتی فلمیں بھی نصرت کی آواز کے بغیر ادھوری سمجھی جانے لگیں ، اس کے علاوہ انہوں نے کئی بھارتی فلموں میں گانے کے ساتھ موسیقی بھی ترتیب دی۔نصرت فتح علی کی قوالیوں کے 125 البمز ریلیز ہوئے جس کی وجہ سے ان کا نام گنیز بک آف دی ورلڈ ریکارڈ میں درج کیا گیا، ان کے مشہورگیتوں میں اکھیاں اڈیکدیاں، ایس توں ڈاڈا دکھ نہ کوئی، یار نہ بچھڑے ، میری زندگی ہے تو اور دلوں میں اتر جانے والی حمدوہی خدا ہے قابل ذکر ہیں۔عظیم گلوکار نصرت فتح علی خان گرودں کے عارضے میں مبتلا ہو کر شدید بیمار پڑے اور 17 اگست 1997 کو دنیائے فانی سے کوچ کر گئے۔ نصرت فتح علی خان کی آواز آج بھی ان کے مداحوں کے دلوں میں زندہ ہیں۔