: تازہ ترین

تازہ ترین ویڈیو

سندھ حکومت نے عوام کے مفاد اور حفاظت کی خاطر صوبے میں22 مارچ رات 12 بجے سے لاک ڈاؤن کرنے کا اعلان کیا ہے۔سید ناصر حسین شاہ


syed nasir hussain shah March 22, 2020 | 9:30 PM

کراچی : (نیوزآن لائن ) سندھ کے وزیر اطلاعات ، بلدیات، جنگلات و جنگلی حیات سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ سندھ حکومت نے عوام کے مفاد اور حفاظت کی خاطر صوبے میں22 مارچ رات 12 بجے سے لاک ڈاؤن کرنے کا اعلان کیا ہے۔صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ اس لاک ڈاؤن کو کرفیو نہ سمجھا جائے یا کہا جائے ، اس کے بجائے اسے کیئر فور یو کہا جائے۔ انہوں نے کہا کہ یہ فیصلہ اتوار کے روز وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کی زیر صدارت ہونے والے ایک اہم اجلاس کے دوراں لیا گیا۔اجلاس میں سندھ کابینہ کے تمام اراکین کے علاوہ چیف سیکریٹری سندھ، ڈائریکٹر جنرل رینجرز سندھ ، انسپیکٹر جنرل پولیس سندھ ، کور ہیڈ کوارٹر کے برگیڈیئر وسیم کے علاوہ تمام متعلقہ افسران شریک ہوئے۔سید ناصر حسین شاہ نے اپنے بیان میں اجلاس میں کئے گئے مزید فیصلوں کے بارے میں آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ اس لاک ڈاؤن کے بعد بلاوجہ گھر سے باہر نکلنے والوں کے خلاف ایکشن لیا جائے گا۔ صوبائی وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ عوام کو حکومت سندھ کی صحت کے مطابق جاری کی گئی ہدایات پر سختی سے عمل کرنا چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ صرف زیادہ سے زیادہ احتیاطی تدابیر اختیار کرکے ہی لوگ خود کو اور اپنے آس پاس کے لوگوں کو کرونا وائرس سے محفوظ رکھ سکتے ہیں۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ اس لاک ڈاؤن کو کرفیو کے بجائے کیئر فار یو کہیں۔صوبائی وزیر اطلاعات نے کہا کہ وزیر اعلیٰ سندھ کا یہ خیال تھا کہ ہر وہ فیصلہ اور قدم اٹھایا جائے جو عوام کی صحت اور زندگی کے مفاد میں ہو۔ انہوں نے کہا کہ تمام سخت فیصلے عوام کو کورونا وائرس سے متاثر ہونے سے بچانے کے لئے کئے گئے ہیں۔سید ناصر حسین شاہ نے واضح کیا کہ اس بات کو بھی یقینی بنایا جائے گا کہ اس لاک ڈاؤن کے دوران عوام کو تمام ضروری سہولیات جن میں پانی، بجلی، گیس اور دیگر سہولیات جن میں پانی ، بجلی، گیس اور دیگر سہولیات بلا تعطل ملتی رہیں۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ لاک ڈاؤن کے بعد غیر ضروری طور پر کسی کو بھی گھر سے باہر نہیں دیا جائے گا ۔وزیر اطلاعات سندھ نے کہا کہ اگر کسی کو ضروری طور کہیں جانا ہوا تو وہ سیکیورٹی اہلکاروں کو بتا کر جاسکے گا۔ایک گاڑی میں دو افراد سے زیادہ لوگ نہیں بیٹھ سکیں گے۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ اس لاک ڈاؤن کے دوران مہنگائی اور ذخیرہ اندوزی کرنے والوں کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے گا۔صوبائی وزیر اطلاعات اجلاس میں کئے گئے مزید فیصلوں کے بارے میں بتاتے ہوئے کہا کہ جس کسی کا بھی بجلی کا بل 4 ہزار روپے تک ہوگا وہ معاف کردیا جائے گا اس طرح کسی کا گیس کا بل اگر دو ہزار روپے ہوگا تو وہ بھی معاف کردیا جائے گا۔صوبائی وزیر اطلاعات نے مزید بتایا کے اس دوران ہر قسم کے اجتماع پر پابندی ہوگی اور عبادت گاہیں بھی بند ہوں گی۔اور عبادت گاہیں بھی بند ہوں گی۔انہوں نے کہا کہ اگر کوئی شخص بیمار ہوا تو اسے اسپتال لے جانے کی اجازت ہوگی۔سید ناصر حسین شاہ نے عوام سے درخواست کی کے وہ سندھ حکومت کی جانب سے لئے گئے سخت فیصلوں پر مکمل عملدرآمد کریں کیونکہ یہ ان کے مفاد میں کئے گئے ہیں۔