: تازہ ترین

تازہ ترین ویڈیو

  • کاروبار اور سرمایہ کاری سے متعلق موجودہ حکومت کی سوچ سابقہ حکومتوں سے مختلف ہے۔وزیراعظم عمران خان

    December 9, 2018 | 7:28 PM
    imran khan meeting for stock exchange market

    کراچی:(نیوزآن لائن)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ حکومت ملک میں کاروبار اور سرمایہ کاری کے فروغ اور تحفظ کیلئے پرعزم ہے۔وہ پاکستان سٹاک ایکسچینج کے ایک وفد سے گفتگو کررہے تھے جس نے اپنے چیئرمین سلیمان مہدی کی قیادت میں اتوار کے روز کراچی میں ان سے ملاقات کی۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کاروبار اور سرمایہ کاری سے متعلق موجودہ حکومت کی سوچ سابقہ حکومتوں سے مختلف ہے۔۔ انہوں نے کہا کہ غیر ملکی سرمایہ کار معیشت کے مختلف شعبوں میں سرمایہ کاری میں دلچسپی ظاہر کررہے ہیں۔وزیراعظم نے ملک میں کاروباری ماحول کی بہتری کیلئے تاجروں سے تجاویز طلب کیں۔ انہوں نے وزیراعظم کو سٹاک مارکیٹ کے بروکرز کے مسائل سے بھی آگاہ کیا۔دونوں فریقوں نے ٹیکس کے دائرے کو وسعت دینے اور سٹاک مارکیٹ میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کے استعمال پر اتفاق کیا۔وزیراعظم نے وفد کی بیشتر تجاویز کی منظوری دے دی۔

Live News Channels

Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

Corruption News
CORRUPTION NEWS
CRIME STORIES
CRIME STORIES
TALK SHOWS
TALK SHOWS
DIPLOMAT NEWS
MINORITIES NEWS

ADVERTISEMENT CORNER

NewsOnline

Visitor Counter

Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player


(Click here)پاکستان نیوز

  • کاروبار اور سرمایہ کاری سے متعلق موجودہ حکومت کی سوچ سابقہ حکومتوں سے مختلف ہے۔وزیراعظم عمران خان

    December 9, 2018 | 7:28 PM
    imran khan meeting for stock exchange market

    کراچی:(نیوزآن لائن)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ حکومت ملک میں کاروبار اور سرمایہ کاری کے فروغ اور تحفظ کیلئے پرعزم ہے۔وہ پاکستان سٹاک ایکسچینج کے ایک وفد سے گفتگو کررہے تھے جس نے اپنے چیئرمین سلیمان مہدی کی قیادت میں اتوار کے روز کراچی میں ان سے ملاقات کی۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کاروبار اور سرمایہ کاری سے متعلق موجودہ حکومت کی سوچ سابقہ حکومتوں سے مختلف ہے۔۔ انہوں نے کہا کہ غیر ملکی سرمایہ کار معیشت کے مختلف شعبوں میں سرمایہ کاری میں دلچسپی ظاہر کررہے ہیں۔وزیراعظم نے ملک میں کاروباری ماحول کی بہتری کیلئے تاجروں سے تجاویز طلب کیں۔ انہوں نے وزیراعظم کو سٹاک مارکیٹ کے بروکرز کے مسائل سے بھی آگاہ کیا۔دونوں فریقوں نے ٹیکس کے دائرے کو وسعت دینے اور سٹاک مارکیٹ میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کے استعمال پر اتفاق کیا۔وزیراعظم نے وفد کی بیشتر تجاویز کی منظوری دے دی۔

(Click here)سندھ نیوز

  • اسپیشل ایبل افراد کے حقوق کا تحفظ حکومت سندھ کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔مرتضیٰ وہاب

    December 9, 2018 | 6:45 PM
    murtuza wahab 3

    کراچی:(نیوزآن لائن) وزیراعلیٰ سندھ کے مشیر برائے اطلاعات، قانون اور اینٹی کرپشن بیرسٹرمرتضیٰ وہاب نے کہا ہے کہ اسپیشل ایبل افراد کے حقوق کا تحفظ حکومت سندھ کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔انہوں نے یہ بات اسپیشل ایبل افرادکے بین الاقوامی دن کے حوالے سے منعقد ہونے والے ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت جسمانی و ذہنی کمزوری کے حامل بچوں کو اسپیشل ایبلڈ بچوں کے طور پر لیتی ہے، کیونکہ ایسے بچے مشیر اطلاعات کے بقول خصوصی صلاحیتوں کے حامل ہوتے ہیں۔مشیر اطلاعات سندھ بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ سندھ حکومت اسپیشل ایبل افراد کے حقوق کے تحفظ کیلئے ضروری اقدامات کررہی ہے۔ اس سلسلے میں انہوں نے اسپیشل ایبل افراد کو بااختیار بنانے کے بل کا حوالہ بھی دیا۔بیرسٹر مرتضیٰ وہا ب کا کہنا تھا کہ مذکورہ بل اسپیشل ایبل افراد کے حقوق کے مکمل تحفظ کی ضمانت دیتا ہے۔انہوں نے کہا کہ اسپیشل ایبل افراد کی ملازمت کے 5 فیصد طے کئے گئے کوٹہ پر عمل درآمد کو یقینی بنایا جا رہا ہے، نہ صرف یہ بلکہ اسپیشل ایبل افراد اب کسی بھی سرکاری یا نجی تعلیمی ادارے میں داخلہ لینے کے اہل ہیں۔انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت کی ازحد کوشش ہے کہ اسپیشل ایبل ا فراد کو صحت اور تعلیم کے بہترین سہولیات فراہم کی جائیں۔ اس سلسلے میں سندھ حکومت نے صوبے کے بیشتر اضلاع میں اسپیشل ایبل افرادکی ذہنی و جسمانی بحالی کے مراکز قائم کئے ہیں۔انہوں نے خاص طور پر کراچی میں آٹزم بحالی مرکز کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ آٹزم کے شکار بچوں کے لئے یہ ایک انتہائی اہمیت کا حامل مرکز ہے۔
    مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ حکومت اسپیشل ایبل افرادکو معاشرہ کا اہم حصہ گردانتی ہے اور حکومت کا یہ ماننا ہے کہ اگراسپیشل ایبل افراد کو مناسب ماحول او ر مواقع فراہم کئے جائیں تو یہ اسپیشل ایبل افراد معاشرہ کا اثاثہ ثابت ہوسکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ جلد ہی حکومت صوبے کے ہر ضلع میں اسپیشل افراد کی بحالی کے مراکز قائم کردئے جائیں گے۔ اس موقع پر خطا ب کرتے ہوئے سینیٹر عبدالحسیب خان نے وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاھ کو کراچی ووکیشنل سینٹر کو دس روز سے بھی کم مدت میں ڈھائی کروڑ روپیہ فراہم کرنے پر شاندار لفظوں میں خراج تحسین پیش کیا۔ سینیٹر عبدالحسیب خان نے کہا کہ وزیر اعلیٰ سندھ یہ قدم ظاہر کرتا ہے کہ سندھ حکومت اسپیشل ایبل افراد کے معاملے میں کس قدر سنجیدہ ہے اور کام کر رہی ہے۔ اس موقع پر اسپیشل ایبل افراد نے ٹیبلوبھی پیش کیا۔

(Click here)کراچی نیوز

  • کوئی ملک یا معاشرہ کسی بھی قسم کی ترقی کا تصور ہی نہیں کرسکتا جب تک وہ معاشرے یا قوم علم کی اہمیت کو تسلیم نہیں کرلیتے۔ڈاکٹر اجمل خان

    December 9, 2018 | 6:28 PM
    karachi university

    کوئی بھی ڈاکٹر یا ٹیچرتھر یااس جیسے دیگر علاقوں میں ڈیوٹی سرانجام دینا نہیں چاہتے ہیں۔سینیٹر امام الدین شوقین
    کراچی پورے پاکستان کو ریلیف پہنچاتا ہے اور تقریباً70 فیصد ریونیوفراہم کرتاہے اورکراچی میں رہنے والے سب زیادہ انکم ٹیکس اداکرتے ہیں۔علی رضاعابدی
    کراچی:(نیوزآن لائن)جامعہ کراچی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر محمد اجمل خان نے کہا کہ میں بحیثیت سائنسدان میں یہ بات کررہاہوں کہ پاکستان قدرتی وسائل میں دنیا کے امیرترین ممالک میں سے ایک ہے۔ملک کے تمام شعبے اس وقت ترقی کی جانب گامزن ہوسکتے ہیں جب ہم سب محنت سے اور مل کر کام کریں ۔پاکستان میں صلاحیتوں کی کمی نہیں ہے ،اگر ہم سب اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لائیں تو پاکستان کو ترقی یافتہ ممالک کی فہرست میں شامل ہونے سے کوئی نہیں روک سکتا۔ضرورت اس امر کی ہے کہ تمام اسٹیک ہولڈرز اپنی صلاحیتوں کا بھرپور استعمال کرکے ملک کو درپیش مسائل کے خاتمے کے لئے اپنا کردار اداکریں۔کوئی ملک یا معاشرہ کسی بھی قسم کی ترقی کا تصور ہی نہیں کرسکتا جب تک وہ معاشرے یا قوم علم کی اہمیت کو تسلیم نہیں کرلیتے اور اس کو اپنے ملک کی ترقی کیلئے ناگزیر نہیں سمجھ لیتے۔ آج اگر ہم جائزہ لیں تو وہی ملک ترقی کی بلندیوں پر نظر آتے ہیں جنہوں نے علم کی اہمیت کو تسلیم کیا۔ تاریخ گواہے کہ جو ممالک زوال پذیر ہوئے ہیں،ان کی پستی کی سب سے بڑی وجہ علم سے دوری ہے۔درحقیقت نوجوانی کا دور وہ دور ہوتا ہے جب انسان کے ارادے، جذبے اور توانائی اپنے عروج پہ ہوتے ہیں، اگران جذبوں اور توانائی سے قوم و ملک فائدہ نہ اٹھا سکیں تو یہ انتہائی بڑا نقصان ہے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے جامعہ کراچی کے شعبہ سیاسیات کے زیر اہتمام اور ینگ سوشل ریفارمرز کے اشتراک سے جامعہ کراچی کے کلیہ فنون وسماجی علوم کی سماعت گاہ میں منعقدہ کانفرنس بعنوان: ”پاکستان کی تعمیر وترقی میں نوجوانوں کا کردار” سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔سینیٹر امام الدین شوقین نے کہا کہ بحیثیت طالب علم ہمارے سوچنے اور چیزوں کو دیکھنے کا نظریہ مختلف ہوتاہے۔مگر جیسے ہی ہم اپنی پیشہ ورانہ زندگی کا آغاز کرتے ہیں ،ہماری ترجیحات یکسر تبدیل ہوجاتی ہیں۔کوئی بھی ڈاکٹر یا ٹیچرتھر یااس جیسے دیگر علاقوں میں ڈیوٹی سرانجام دینا نہیں چاہتے ہیں۔ اعلیٰ عدالتی احکامات پر ابھی حال ہی میں 100 سے زائد ڈاکٹر ز کا تھر میں تبادلہ کیاگیا تاہم جس پر ان کو اعتراض تھا کہ ان کے تبادلے سے ان کے گھریلو امور متاثر ہورہے ہیں جبکہ نوکری کے حصول کے وقت ڈاکٹرز اور ٹیچرز ہر جگہ کام کرنے کے لئے رضا مندی ظاہر کرتے ہیں۔لائق تحسین ہیں وہ لوگ جو اپنے بجائے دوسروں کے لئے سوچتے ہیں۔سابق ممبر قومی اسمبلی علی رضا عابدی نے کہا کہ آج پاکستان میں ہم سب کو جس چیز میں شامل ہونے کی ضرورت ہے وہ وہ پاکستان کی معیشت کی ری ہیبی لیٹیشن کی ضرورت ہے۔آج سے تین ماہ قبل جوگھرانے 30 ہزار وپے میں گزاراکرتے تھے آج انہیں 36 ہزار روپے کی ضرورت ہے۔کراچی میں بہت ڈیولپمنٹ کی ضرورت ہے ،کراچی پورے پاکستان کو ریلیف پہنچاتا ہے اور تقریباً70 فیصد ریونیوفراہم کرتاہے اورکراچی میں رہنے والے سب زیادہ انکم ٹیکس اداکرتے ہیں۔ہم سب کو مل کر پاکستان کو ری ہیبی لیٹیٹ کرنے کی ضرورت ہے۔عصر حاضر میںسوشل میڈیا کے استعمال کے ذریعے ہم مڈل مین کا رول ختم کرکے اصل ہنرمند کو زیادہ مالی فائدہ پہنچانے کا سبب بن سکتے ہیں،لہذا ہم سب اس کے لئے اپنا کرداراداکرنے کی ضرورت ہے۔سوشل سروس اور ڈیلیوری کا جذ بہ آپ اور ہم سب میں ہونا چاہیئے اور یہی چیز ہے جو آپ کو عوام سے قریب بھی کرتی ہے اور اپنے خیالات کے اظہار کا موقع اور رائے بھی ملتی ہیں۔چیئرمین ڈسٹرکٹ میونسپل کارپوریشن سینٹرل ریحان ہاشمی نے کہا کہ آنے والے وقتوں جنگ پانی کے مسئلے پر ہوں گی۔گذشتہ چند برسوں میں اندورن سندھ ہونے والی اموات کا تعلق غذائی قلت سے ہے، طبی سہولتوں کے فقدان سے نہیں ۔تھرسمیت صوبہ سندھ کے بیشتر ڈسٹرکٹ میں پینے کے لئے صاف پانی میسر نہیں ہے۔انہوں نے طلبہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ہر مسئلے کے حل کے لئے حکومت پر بھروسہ کرنے کے بجائے متبادل ذرائع سے استفادہ حاصل کرنے کی کوشش کریں۔معروف موٹی ویشنل اسپیکر ساجد اطہر خان نے کہا کہ ہر شخص اپنی زندگی میں کسی نہ کسی مشکل کا سامنا کررہاہوتاہے۔لیکن اگر مثبت سوچ کے ذریعے اس کا سامنا کیا جائے تو ان مشکلات کو ختم بھی کیا جاسکتا ہے اور دوسری صورت میں اس مشکل کو کافی حدتک کم بھی کیا جاسکتا ہے۔مسکرانا اور مسکراہٹ کا جواب اسی طرح سے دینا آپ کی مشکلات کو کم کرنے میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔آپ کے چہرے کے تاثرات آپ کی سوچ کی عکاسی کرتی ہے۔ہر ایک سیکنڈ میں آٹھ افراد اپنی جان سے ہاتھ دھوبیٹھتے ہیں ،ہمیں شکر اداکر نا چاہیئے کہ ہمارا شمار ان فراد میں نہیں۔مختلف لوگوں سے بات کرنا اپنے پیغا م کو دوسروں تک پہنچانے کا سب سے اہم ذریعہ ہے۔معروف قانون دان ضیاء اعوان نے کہا کہ پاکستان کا شمار دنیا میں امدادی کام کرنے والے ممالک میں دوسرے نمبر پر آتا ہے ،پہلے نمبر پر امریکہ جبکہ دوسرے نمبر پر پاکستان کا نام آتاہے۔ہمارے یہاں امدادی کاموں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا جاتا ہے اور اس مد میں ایک خطیر رقم جمع ہوتی ہے لیکن اس کے صحیح استعمال کو لیکر خدشات کا اظہار بھی کیا جاتاہے۔بالاکوٹ میں ہونے والے زلرلے کے متاثرین کے لئے سب سے زیادہ امداد کراچی سے جمع کی گئی تھی۔بدقسمتی سے کراچی کا شمار سونامی اور زلزلے جیسی خطرنات قدرتی آفات والی جگہوں میں ہوتا ہے،اس لئے اس بات کی اشد ضرورت ہے کہ شہر کا انفراسٹرکچر محفوظ سے محفوظ تر بنایا جائے اور مزید انفرااسٹرکچر ان تمام خدشات کو مد نظر رکھتے ہوئے ترتیب دیا جائے اور کثیر المنزلہ عمارتوںکی تعمیر سے گریز کیا جائے ۔جامعہ کراچی کے شعبہ سیاسیات کے ڈاکٹر محمد علی نے کہا کہ نوجوانوں کو مزید بااختیار بنانا چاہیئے ،کیونکہ نوجوان ہی ہمارے ملک کامستقبل اور اثاثہ ہیں اور ملک کی ترقی میں اہم کردار اداکرتے ہیں۔شعبہ سیاسیات ینگ سوشل ریفارمرز کے ان اقدمات کی حوصلہ افزائی کرتاہے۔

(Click here)بزنس

  • سپریم کورٹ کے احکامات کی غلط تشریح پر چیئرمین بلدیہ وسطی اور میونسپل کمشنر کیخلاف چیف جسٹس سپریم کورٹ کاروائی کریں۔ یونائیٹڈ آفیسرز فورم

    December 9, 2018 | 6:55 PM
    appeal for supreme court karachi

    انیسوں ستاسی سے 2018تک مختلف ادوار میں کے ایم سی اور ڈی ایم سی ایک ہی سروس کے حامل رہے ۔ ملازمین میونسپل سروس میں آتے ہیں ۔ لازمی سروس اور سول سرونٹ کے زمرے میں نہیں آتے۔ کے ایم سی اور چھ کی چھ ڈی ایم سیز سیمی گورنمنٹ اور خود مختار ادارے ہیں ۔ سپریم کورٹ کے احکامات کی الف ب سے چیئرمین اور میونسپل کمشنر واقف نہیں
    چھ ماہ کے بقایا جات جو اب تک تنخواہوں میں ادا نہیں کئے گئے انکی طلبی پر تبادلے کئے گئے۔ ملازمین کے پیسے ٹھیکیداروں کو دے دیئے گئے۔ نیب بلدیہ وسطی میں گورکھ دھندوں کا نوٹس لے ۔ عدنان آرائیں ۔ صدریونائیٹڈ آفیسرز فورم کراچی
    اسامہ قادری کے سالے نعمان کو کے ایم سی سے تین گریڈ میں سے 16گریڈ بلدیہ وسطی سے دیا گیا۔ فہیم قائم خانی جو انیس قائم خانی کے کزن ہیں اسے بلدیہ شرقی سے لاکر5گریڈ سے 11گریڈ کیا گیا۔ گریڈ 18کی رضوانہ نذیر کو شرقی سے وسطی لایا گیا۔خالد ریاض کو کے ایم سی سے وسطی لایا گیا ۔اسلم خان کے ایم سی سے لایا گیا۔ کیا ان پر قانون کا اطلاق نہیں ہوتا۔ صدر یو او ایف
    وسیم سومرو جس کا ایجنٹ ہے وہ بات ڈھکی چھپی نہیں ۔ ریحان ہاشمی کرپشن چھپانے کے لئے وسیم سومرو کے طابع ہیں ۔ سارے کھیل کے پیچھے جعلی تعینات 18گریڈ کا لوکل گورنمنٹ کے جعلی آرڈر پر تعینات اسلم خان ہے۔ آئینی پیٹیشن دائر کرنے جا رہے ہیں ۔ فوری تبادلے منسوخ کئے جائیں ۔ بلدیہ وسطی کے تمام گورکھ دھندے سامنے لائیں گے۔یو او ایف
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کراچی:(نیوزآن لائن)یونائیٹڈ آفیسرز فورم پاکستان کے صدر کراچی عدنان آرائیں نے چیف جسٹس آف پاکستان ، نیب کراچی اور اینٹی کرپشن سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ بلدیہ وسطی میں اقربا پروری ، جعلسازیوں ، ملازمین کے فنڈز کی ٹھیکیداروں کی ادائیگی سمیت سپریم کورٹ کے احکامات کی غلط تشریح پر کئے جانے والے انتقامی تبادلوں پر چیئرمین بلدیہ وسطی اور میونسپل کمشنر کیخلاف کاروائی کریں۔ سالہا سال کے بعد متعصب افسر وسیم سومرو جنہیں انکی حرکات کی بنیاد پر بلدیہ کورنگی نے چارج نہیں دیا تھا۔ دوبارہ اپنی مخصوص ذہنیت اور سازش فارمولے کے تحت فنڈز کی خرد برد میں احتجاج کرنے والے افسران کو تبادلہ کرنے کی سخت مذمت کی ہے۔ عدنان آرائیں نے کہا کہ سے 2018تک مختلف ادوار میں کے ایم سی اور ڈی ایم سی ایک ہی سروس کے حامل رہے ۔ ملازمین میونسپل سروس میں آتے ہیں ۔ لازمی سروس اور سول سرونٹ کے زمرے میں نہیں آتے۔ کے ایم سی اور چھ کی چھ ڈی ایم سیز سیمی گورنمنٹ اور خود مختار ادارے ہیں ۔ سپریم کورٹ کے احکامات کی الف ب سے چیئرمین اور میونسپل کمشنر واقف نہیں ۔چھ ماہ کے بقایا جات جو اب تک تنخواہوں میں ادا نہیں کئے گئے انکی طلبی پر تبادلے کئے گئے۔ ملازمین کے پیسے ٹھیکیداروں کو دے دیئے گئے۔ نیب بلدیہ وسطی میں گورکھ دھندوں کا نوٹس لے ۔ عدنان آرائیںنے مذید کہا کہ اگر سپریم کورٹ کا حکم نامہ کی تشریح درست مان لی جائے تو پھر اسامہ قادری کے سالے نعمان کو کے ایم سی سے تین گریڈ میں سے 16گریڈ بلدیہ وسطی سے دیا گیا۔ فہیم قائم خانی جو انیس قائم خانی کے کزن ہیں اسے بلدیہ شرقی سے لاکر5گریڈ سے 11گریڈ کیا گیا۔ گریڈ 18کی رضوانہ نذیر کو شرقی سے وسطی لایا گیا۔خالد ریاض کو کے ایم سی سے وسطی لایا گیا ۔اسلم خان کے ایم سی سے لایا گیا۔ کیا ان پر قانون کا اطلاق نہیں ہوتا؟ اسی طرح محکمہ تعلیم ، صحت ، دیگر محکموں میں دوسری ڈی ایم سیز سے آنے والوں کی بہت بڑی تعداد موجود ہے ۔ محکمہ تعلیم ، صحت ۔ لوکل ٹیکسز سے آنے والوں کو بھی کیا اسکے زمرے میں لاکر فارغ کردیا جائے گا۔ چیف جسٹس سپریم کورٹ کے احکامات کو مزاق اور غلط تشریح پر میونسپل کمشنر وسیم سو،مرو کو قانون کے کٹہرے میں لائیں ۔ یہ شخص عدالتوں سے وارننگ پر ہے ۔ سیم سومرو جس کا ایجنٹ ہے وہ بات ڈھکی چھپی نہیں ۔ ریحان ہاشمی کرپشن چھپانے کے لئے وسیم سومرو کے طابع ہیں ۔ سارے کھیل کے پیچھے جعلی تعینات 18گریڈ کا لوکل گورنمنٹ کے جعلی آرڈر پر تعینات اسلم خان ہے۔ آئینی پیٹیشن دائر کرنے جا رہے ہیں ۔ فوری تبادلے منسوخ کئے جائیں ۔ بلدیہ وسطی کے تمام گورکھ دھندے سامنے لائیں گے۔ سازشی ذہن اور کسی اور کے پے رول پر کام کرنے والا یہ افسر جوائننگ نہ ملنے پر نیب کے ساتھ ملکر بلدیہ کورنگی کے فنڈز سیز کراچکا ہے۔ عدنان آرائین نے کہا کہ ریحان ہاشمی فاروق ستار گروپ کی سیاست کرنے کے بجائے تبادلے منسوخ اور وسیم سومرو سے بلیک میل ہونا بند کریں ورنہ عدالت اور ایف آئی آر انکا مقدر ہوگی۔ نیب کو بھی خط لکھنے کی تیاری کر رہے ہیں ۔ افسران کو ترنوالہ نہ سمجھا جائے ۔ صوبائی وزیر بلدیات سعید غنی بھی نوٹس لیں ۔

(Click here)کھیل

  • پاکستان کی ترقی اور تعمیر میں نوجوان ہی ہراول دستہ ثابت ہوسکتے ہیں

    December 9, 2018 | 6:18 PM
    Pic Cricket

    کراچی یونیورسٹی کے شعبۂ سیاسیات کی جانب منعقدہ سیمینار میں مقررین کا خطاب
    کراچی:(نیوزآن لائن)پاکستان کی ترقی ، خوشحالی اور تعمیر میں سب سے اہم کردار نوجوان ہی اداکرسکتے ہیں۔ آج پاکستان کو اپنی حیثیت منوانے کے لئے دنیا میں جس شئے کی سب سے زیادہ ضرورت ہے وہ جذبہ اور خلوص ہے ، اور تاریخ گواہ ہے کہ نوجوانوں میں حُبّ الوطنی، جوش اور ترقی کرنے کا جذبہ بہت زیادہ ہوتاہے۔ کراچی یونیورسٹی کے شعبۂ سیاست کے زیرِاہتمام” نویں سالانہ ٹِپنگ پوائنٹ کانفرنس ” میں مقررین نے اظہارِ خیال کرتے ہوئے نوجوانوں کو پاکستان کا حقیقی مستقبل اور ترقی کا ضامن قراردیا۔کراچی یونیورسٹی کے شعبۂ فنون کے آڈیٹوریم میں منعقدہ سیمنار میںوائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر محمد اجمل خان نے طلبا و طالبات سے خطاب کرتے ہوئے کہ پاکستان قدرتی وسائل سے مالا مال ہے اگر ہم ایمانداری سے کام کریں تو پاکستان دنیا کا سب سے زیادہ ترقی یافتہ ملک بن سکتاہے ۔مگر ضروری ہے کہ تعلیم عام ہو ۔انہوں نے طلبا و طالبات کو نصیحت کی کہ وہ خود کو پاکستان کا محب وطن سپاہی بنائیں اور پاکستان کو ترقی یافتہ ملک بنانے کے لئے ایک بہادر سپای کا کرداراداکریں ۔ اس موقع پر چیئرمین ضلع وسطی ریحان ہاشمی نے طلبا و طالبات سے خطاب کرتے ہوئے پاکستانی نوجوانوں کو پاکستان کی خوشحالی ،ترقی اور تعمیر کے لئے ہراول دستہ قراردیا۔انہوں نے کہا کہ افرادی قوت کسی بھی ملک کی ترقی کے لئے اہم عنصر کی حیثیت رکھتی ہے ۔ انہوں نے کراچی یونیورسٹی کے نوجوان طلبا و طالبات کو تعمیری سوچ کے مظہر پروگرام کے انعقاد پر خراجِ تحسین پیش کیا۔مذکورہ سیمنار میں ”ینگ سوشل رفارمرز” کے نمائندے پورے پاکستان سے شرکت کے لئے آئے تھے۔بعد ازاں انّو بھائی پارک ناظم آباد میں چیئرمین ضلع وسطی الیون اور ینگ سوشل رفارمرز الیون کے درمیان ایک نمائشی کرکٹ میچ بھی کھیلا گیا۔جس میں وائی ایس آر کی ٹیم نے فتح حاصل کی۔ ریحان ہاشمی کی جانب سے خصوصیعشائیہ کا بھی اہتمام کیا گیا۔

(Click here)ثقافت

  • پیک فرینس سوپر کے تعاون سے جنون گروپ کا لائیو کانسرٹ 25دسمبر کو ہوگا

    December 9, 2018 | 8:21 PM
    junon band

    کراچی:(نیوزآن لائن)پاکستان کے تاریخی میوزیکل بینڈ جنون کو کامیابی سے یکجا کرنے کے بعد پیک فرینس سو پر کے تعاون سے مشہور بیند جنون گروپ کا لائیو کانسرٹ 25دسمبر کو ہوگا۔کانسرٹ کا اعلان تقریبا 500مو سیقار نے جمع ہو کر جنو ن بینڈ کو خراج ِ تحسین پیش کر کے اور اپنی مو سیقی کے ذریعے پاکستان کے جذبے کو اجا گر کر کے کیا۔جنون کے یکجا ہونے کی خبروں کے بعد ان کی فین فالوئنگ میں بے پناہ اضافہ ہوا ہے اس کے ساتھ ملک کے سب سے پسندیدہ صوفی راک بینڈ کو دوبارہ پیش کیا ، تاکہ جنون بینڈ اپنے شائقین کے سامنے ایک نئی تاریخ رقم کرسکیں۔

(Click here)انٹر نیشنل

  • عالمی برادری فلسطینیوں کواسرائیل کے ظلم سے بچانے کے لیے اقدامات کرے۔ شاہ سلمان بن عبدالعزیز

    December 9, 2018 | 7:16 PM
    shah salman gcc meeting

    ریاض:(نیوزآن لائن) سعودی نیوز ایجنسی کے مطابق شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے خلیجی عرب ممالک کی تنظیم جی سی سی کے 39 ویں سربراہی اجلاس کا ریاض میں باضابطہ افتتاح کردیا ہے۔ اجلاس کی سربراہی سعودی فرماں روا کریں گے۔ اجلاس میں رکن ممالک کے سربراہان شریک ہیں ،سعودی فرماں روا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے کہا ہے کہ عالمی برادری فلسطینیوں کواسرائیل کے ظلم سے بچانے کے لیے اقدامات کرے۔تنظیم برائے تعاون مابین خلیجی ممالک جی سی سی کے 39 ویں اجلاس میں شام اور یمن میں قیام امن کے لیے پیشرفت کے جائزے کو ایجنڈے میں اولین ترجیح پر رکھا گیا ہے جب کہ عراق کی موجودہ صورت حال پر بھی زیر بحث ہے۔